ﻋﺎﻟﻢ ﻭﺟﻮﺩ ﻣﯿﮟ ﻃﻮﻟﯽ ﺳﻠﺴﻠﻪ ﮐﻮ ﺑﯿﺎﻥ ﻓﺮﻣﺎﺋﯿﮯ؟

ﻋﺎﻟﻢ ﻭﺟﻮﺩ ﻣﯿﮟ ﻃﻮﻟﯽ ﺳﻠﺴﻠﻪ ﮐﻮ ﺑﯿﺎﻥ ﻓﺮﻣﺎﺋﯿﮯ ـ

ﺍﺟﻤﺎﻟﯽ ﺟﻮﺍﺏ

ﺍﻟﻬٰﯽ ﻓﻼﺳﻔﻪ، ﻣﻦ ﺟﻤﻠﻪ ﻣﺸّﺎﺋﯽ ﺍﺷﺮﺍﻗﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﺘﻌﺎﻟﯽ ﺣﮑﻤﺖ ﮐﮯ ﻗﺎﺋﻞ، ” ﻗﺎﻋﺪﻩ ﺍﻟﻮﺍﺣﺪ ” ﮐﯽ ﺑﻨﺎﭘﺮ ﮐﮭﺘﮯ ﻫﯿﮟ : ﭼﻮﻧﮑﻪ ﺧﺪﺍﻭﻧﺪ ﻣﺘﻌﺎﻝ ﺍﯾﮏ ﺑﺴﯿﻂ ﻭ ﻭﺍﺣﺪ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﻭﺍﺣﺪ ﺟﻬﺖ ﮐﺎ ﻣﺎﻟﮏ ﻫﮯ، ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﺫﺍﺕ ﻭﺍﺣﺪ ﻭ ﺑﺴﯿﻂ ﺍﻟﻬٰﯽ ﺳﮯ ﻋﺎﻟﻢ ﺧﻠﻘﺖ ﺍﻭﺭ ﻣﻌﺎﻟﯿﻞ ﮐﺜﯿﺮ ﮐﺎ ﺻﺎﺩﺭ ﻫﻮﻧﺎ ﻧﺎ ﻣﻤﮑﻦ ﻫﮯ ـ ﺍﺱ ﺑﻨﺎﭘﺮ ﻓﻼﺳﻔﻪ، ﻋﺎﻟﻢ ﻋﻘﻮﻝ ﮐﮯ ﻗﺎﺋﻞ ﻫﻮﺋﮯ ﻫﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﺍﻣﺮ ﭘﺮ ﺍﺗﻔﺎﻕ ﻧﻈﺮ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﻫﯿﮟ ﮐﻪ ﻋﺎﻟﻢ ﻋﻘﻠﯽ، ﻋﺎﻟﻢ ﻣﺎﻭﺭﯼٰ ﮐﯽ ﺍﯾﺠﺎﺩ ﻣﯿﮟ ﻭﺍﺳﻄﻪ ﻫﮯ ـ ﻣﺸﺎﺋﯽ ﻋﻘﻮﻝ ﻃﻮﻟﯽ ﮐﮯ ﻗﺎﺋﻞ ﻫﻮﺋﮯ ﻫﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺗﻌﺪﺍﺩ ﺩﺱ ﻋﻘﻮﻝ ﺟﺎﻧﺘﮯ ﻫﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺁﺧﺮﯼ ﻋﻘﻞ ﮐﻮ ﻋﻘﻞ ﻓﻌﺎﻝ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻣﻌﺮﻓﯽ ﮐﺮﺗﮯ ﻫﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻋﺎﻟﻢ ﺧﻠﻘﺖ ﮐﯽ ﭘﯿﺪﺍﺋﺶ ﮐﮯ ﻓﻼﺳﻔﻪ ﺗﺪﺑﯿﺮ ﻋﺎﻟﻢ ﮐﻮ ﻋﻘﻞ ﻓﻌﺎﻝ ﮐﺎ ﮐﺎﻡ ﺟﺎﻧﺘﮯ ﻫﯿﮟ، ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺷﺮﺍﻗﯽ ﺍﻭﺭ ﺣﮑﻤﺖ ﻣﺘﻌﺎﻟﯿﻪ ﮐﺘﻬﮯ ﻫﯿﮟ ﮐﻪ : ﺩﺱ ﻃﻮﻟﯽ ﻋﻘﻮﻝ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻋﺮﺿﯽ ﻋﻘﻮﻝ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﮐﭽﮭـ ﻋﻘﻮﻝ ﻫﯿﮟ، ﺍﻥ ﮐﮯ ﺩﻣﯿﺎﻥ ﮐﺴﯽ ﻗﺴﻢ ﮐﯽ ﻋﻠﺖ ﻭ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮐﺎ ﺭﺍﺑﻄﻪ ﻧﻬﯿﮟ ﻫﮯ، ﺑﻠﮑﻪ ﻋﺮﺽ ﻋﻘﻮﻝ، ﺍﻧﻮﺍﻉ ﻣﺎﺩﯼ ﻋﺎﻟﻢ ﺍﻭﺭ ﺭﺏ ﺍﻟﻨﻮﻉ ﻣﺎﺩﯾﺎﺕ ﮐﯽ ﻣﺜﺎﻝ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﻮﺍﻉ ﻣﺎﺩﯼ ﮐﮯ ﻫﺮ ﻧﻮﻉ ﮐﯽ ﭘﯿﺪﺍﺋﺶ ﻭ ﺗﺪﺑﯿﺮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺭﺏ ﺍﻟﻨﻮﻉ ﮐﮯ ﺫﺭﯾﻌﻪ ﻫﻮﺗﯽ ﻫﮯ ـ ﺍﻧﻬﻮﮞ ﻧﮯ ﻋﻘﻮﻝ ﻣﺠﺮﺩ ﻋﺮﺿﯽ ﮐﻮ ﺛﺎﺑﺖ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ” ﺍﻣﮑﺎﻥ ﺍﺷﺮﺍﻑ ﻭ ﻧﻈﻢ ﺍﻧﻮﺍﻉ ﻣﺎﺩﯼ ” ﮐﺎ ﻗﺎﻋﺪﻩ ﺟﯿﺴﮯ ﮐﭽﮭـ ﺩﻻﺋﻞ ﮐﻮ ﭘﯿﺶ ﮐﯿﺎ ﻫﮯ ـ

ﺗﻔﺼﯿﻠﯽ ﺟﻮﺍﺏ

ﺍﻟﻬٰﯽ ﻓﻼﺳﻔﻪ ﻣﻦ ﺟﻤﻠﻪ ﻣﺸﺎﺋﯽ، ﺍﺷﺮﺍﻗﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﺘﻌﺎﻟﯽ ﺣﮑﻤﺖ ﮐﮯ ﻗﺎﺋﻞ، ﺍﺱ ﺍﻣﺮ ﭘﺮ ﺍﺗﻔﺎﻕ ﻧﻈﺮ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﻫﯿﮟ ﮐﻪ ﻋﺎﻟﻢ ﻋﻘﻠﯽ، ﻋﺎﻟﻢ ﻣﺎﻭﺭﯼٰ ﮐﮯ ﺍﯾﺠﺎﺩ ﮐﺎ ﻭﺍﺳﻄﻪ ﻫﮯ، ﺍﮔﺮ ﭼﻪ ﺗﻌﺪﺍﺩ ﻋﻘﻮﻝ ﺍﻭﺭ ﮐﺜﺮﺕ ﻋﻘﻮﻝ ﮐﮯ ﻃﺮﯾﻘﻪ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﺧﺘﻼﻑ ﭘﺎﯾﺎﺟﺎﺗﮯ ﻫﮯـ ﻣﺜﺎﻝ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﺷﺮﺍﻗﯽ ﻓﻼﺳﻔﻪ ﻋﻘﻮﻝ ﻋﺮﺿﯽ ﮐﮯ ﻭﺟﻮﺩ ﮐﻮ ﻗﺒﻮﻝ ﮐﺮﺗﮯ ﻫﯿﮟ، ﻟﯿﮑﻦ ﻣﺸﺎﺋﯽ ﻓﻼﺳﻔﻪ ﻋﻘﻮﻝ ﻋﺮﺿﯽ ﮐﮯ ﻣﻨﮑﺮ ﻫﯿﮟ ‏[ 1 ‏] ـ

ﺍﻭﻟﯿﻦ ﺻﺎﺩﺭ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﻣﺠﺮﺩ ﻋﻘﻼﻧﯽ ﻫﻮﻧﮯ ــ ﺟﺴﮯ ﻋﻘﻞ ﺍﻭﻝ ﮐﻬﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﻫﮯ ــ ﮐﻮ ﺛﺎﺑﺖ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﻓﻼﺳﻔﻪ ﮐﺎ ﺑﺮﻫﺎﻥ ﺣﺴﺐ ﺫﯾﻞ ﻫﮯ :

1 ـ ﻭﺍﺟﺐ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﺑﺴﯿﻂ ﻣﺤﺾ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﮐﺴﯽ ﻟﺤﺎﻅ ﺳﮯ ﮐﺜﺮﺕ ﮐﯽ ﺟﻬﺖ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﻣﻤﮑﻦ ﻧﻬﯿﮟ ﻫﮯ، ﻧﻪ ﻣﺎﺩﻩ ﻭ ﺻﻮﺭﺕ ﮐﯽ ﺗﺮﮐﯿﺐ ﮐﮯ ﻣﺎﻧﻨﺪ ﮐﺜﺮﺕ ﺧﺎﺭﺟﯽ ﺍﻭﺭ ﻧﻪ ﻭﺟﻮﺩ ﻭ ﻣﺎﻫﯿﺖ ﮐﯽ ﺗﺮﮐﯿﺐ ﮐﮯ ﻣﺎﻧﻨﺪ ﮐﺜﺮﺕ ﻋﻘﻠﯽ، ﺍﻭﺭ ﻧﻪ ﻭﺟﻮﺩ ﻭ ﻋﺪﻡ ﮐﯽ ﺗﺮﮐﯿﺐ ﺍﻭﺭ ﻧﻪ ﺟﻨﺲ ﻭ ﻓﺼﻞ ﮐﯽ ﺗﺮﮐﯿﺐ، ﭘﺲ ﻭﺍﺟﺐ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﺍﯾﮏ ﻭﺍﺣﺪ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﻫﮯ ـ

2 ـ ” ﻗﺎﻋﺪﻩ ﺍﻟﻮﺍﺣﺪ ” ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﺍﯾﮏ ﻭﺍﺣﺪ ﺍﻭﺭ ﺑﺴﯿﻂ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺳﮯ ﺻﺮﻑ ﻣﻌﻠﻮﻝ ﻫﯽ ﺻﺎﺩﺭ ﻫﻮﺳﮑﺘﺎ ﻫﮯـ ﺍﺱ ﺑﻨﺎﭘﺮ ﺑﺮﺍﻩ ﺭﺍﺳﺖ ﺍﻭﺭ ﺑﻼﻭﺍﺳﻄﻪ ﻣﻌﻠﻮﻝ ﻭﺍﺟﺐ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﺻﺮﻑ ﺍﯾﮏ ﭼﯿﺰ ﻫﮯ ‏[ 2 ‏] ـ

ﺍﺱ ﻟﺤﺎﻅ ﺳﮯ ﺫﺍﺕ ﺍﺣﺪﯾﺖ ﺳﮯ ﮐﺜﯿﺮ ﻭ ﻣﺘﻌﺪﺩ ﻣﻮﺟﻮﺩﺍﺕ، ﺑﻼﻭﺍﺳﻄﻪ ﺍﻭﺭ ﺑﺮﺍﻩ ﺭﺍﺳﺖ ﺻﺎﺩﺭ ﻧﻬﯿﮟ ﻫﻮﺗﮯ ﻫﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺧﺪﺍﻭﻧﺪ ﻣﺘﻌﺎﻝ ﺑﺮﺍﻩ ﺭﺍﺳﺖ ﺍﻥ ﮐﺜﺮﺗﻮﮞ ﮐﻮ ﻭﺟﻮﺩ ﻣﯿﮟ ﻧﻬﯿﮟ ﻻﺗﺎﻫﮯ ، ﺑﻠﮑﻪ ﺻﺮﻑ ﺍﯾﮏ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﻫﮯ ﺟﻮ ﺑﻼﻭﺍﺳﻄﻪ ﺫﺍﺕ ﺍﻗﺪﺱ ﺍﻟﻬٰﯽ ﺳﮯ ﺻﺎﺩﺭ ﻫﻮ ﺗﺎ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻭﻩ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺧﻮﺩ ﭼﻨﺪ ﻣﻮﺟﻮﺩﺍﺕ ﮐﯽ ﺧﻠﻘﺖ ﮐﺎ ﻭﺍﺳﻄﻪ ﺑﻦ ﺟﺎﺗﺎ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﻭﻩ ﺑﮭﯽ ﺍﭘﻨﯽ ﻧﻮﺑﺖ ﭘﺮ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻣﻮﺟﻮﺩﺍﺕ ﮐﻮ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺮﺗﯽ ﻫﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﮐﺜﺮﺕ ﻭﺟﻮﺩ ﻣﯿﮟ ﺁﺗﯽ ﻫﮯ ـ ﻋﻘﻞ ﺍﻭﻝ ﻫﯿﮟ ـ ﺟﻮ ﻭﻫﯽ ﺻﺎﺩﺭ ﺍﻭﻝ ﻫﮯ ــ ﺣﻖ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﮐﮯ ﺗﻤﺎﻡ ﮐﻤﺎﻻﺕ ﻇﺎﻫﺮ ﻫﻮﺋﮯ ﻫﯿﮟ ـ ﯾﻪ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﻋﺎﻟﻢ ﺍﻣﮑﺎﻥ ﮐﺎ ﮐﺎﻣﻞ ﺗﺮﯾﻦ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﻤﮑﻨﺎﺕ ﻣﯿﮟ، ﺳﺐ ﺳﮯ ﺷﺮﯾﻒ ﺗﺮ ﺍﻭﺭ ﮐﺎﻣﻞ ﺗﺮ ﺍﻭﺭ ﺑﺴﯿﻂ ﺗﺮ ﺍﻭﺭ ﻗﻮﯼ ﺗﺮﻫﮯ ـ ﻟﯿﮑﻦ ﭘﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﻭﺍﺟﺐ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﮐﺎ ﻣﺤﺘﺎﺝ، ﻓﻘﯿﺮ ﺍﻭﺭ ﻭﺍﺑﺴﺘﻪ ﻫﮯ ـ ﭘﺲ ﺻﺎﺩﺭ ﺍﻭﻝ ﺗﻤﺎﻡ ﮐﻤﺎﻻﺕ ﻭﺟﻮﺩﯼ ﮐﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ ﺫﺍﺗﯽ ﻧﻘﺼﺎﻥ ﺍﻭﺭ ﺍﻣﮑﺎﻧﯽ ﻣﺤﺪﻭﺩﯾﺖ ﮐﺎ ﺣﺎﻣﻞ ﻫﮯ ـ ﯾﻪ ﻣﺤﺪﻭﺩﯾﺖ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻣﻌﻠﻮﻝ ﺍﻭﺭ ﻣﺨﻠﻮﻕ ﻫﻮﻧﮯ ﮐﺎ ﻻﺯﻣﻪ ﻫﮯ ـ ﯾﻪ ﻣﺤﺪﻭﺩﯾﺖ، ﻋﻘﻞ ﺍﻭﻝ ﮐﮯ ﻭﺟﻮﺩﯼ ﻣﺮﺗﺒﻪ ﮐﮯ ﺍﻣﮑﺎﻥ ﮐﻮ ﻣﺸﺨﺺ ﮐﺮﮐﮯ ﺍﺳﮯ ﻣﺘﻌﯿﻦ ﮐﺮﺗﯽ ﻫﮯ ، ﺟﻮ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺍﻣﮑﺎﻧﯽ ﻣﺎﻫﯿﺖ ﮐﺎ ﻻﺯﻣﻪ ﻫﮯ، ﮐﯿﻮﻧﮑﻪ ﻣﺎﻫﯿﺖ ﺣﺪ ﻭﺟﻮﺩ ﻫﮯ، ﻫﺮ ﻣﺤﺪﻭﺩ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺍﯾﮏ ﻣﺎﻫﯿﺖ ﺭﮐﮭﺘﺎ ﻫﮯ، ﭘﺲ ﻋﻘﻞ ﺍﻭﻝ ﺍﮔﺮ ﭼﻪ ﺍﯾﮏ ﻭﺍﺣﺪ ﺷﺨﺼﯽ ﻫﮯ، ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﻗﺴﻢ ﮐﯽ ﮐﺜﺮﺕ ﭘﺎﺋﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﻬﯽ ﮐﺜﺮﺕ ﺍﺱ ﺳﮯ ﮐﺜﯿﺮ ﮐﮯ ﺻﺪﻭﺭ ﮐﻮ ﻣﻤﮑﻦ ﺑﻨﺎﺗﯽ ﻫﮯ، ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﺮﻋﮑﺲ ﻭﺍﺟﺐ ﺗﻌﺎﻟﯽ، ﮐﯽ ﺫﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﻗﺴﻢ ﮐﯽ ﮐﺜﺮﺕ ﻧﻬﯿﮟ ﭘﺎﺋﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﻫﮯـ ﻋﻘﻞ ﺍﻭﻝ ﻣﯿﮟ ﻣﺘﻌﺪﺩ ﺟﻬﺎﺕ ﭘﺎﺋﯽ ﺟﺎﺗﮯ ﻫﯿﮟ ﺟﻮ ﻋﺒﺎﺭﺕ ﻫﯿﮟ : ﺗﻌﻘﻞ ﻭﺍﺟﺐ ﺗﻌﺎﻟﯽ، ﺗﻌﻘﻞ ﻭﺟﻮﺏ ﻏﯿﺮ ﺧﻮﺩ، ﺍﭘﻨﮯ ﺍﻣﮑﺎﻥ ﺫﺍﺗﯽ ﮐﺎ ﺗﻌﻘﻞ، ﮐﻪ ﯾﻪ ﺟﻬﺖ، ﻭﺍﺟﺐ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﮐﺎ ﻣﻌﻠﻮﻝ ﻧﻬﯿﮟ ﻫﮯ، ﮐﯿﻮﻧﮑﻪ ﺫﺍﺗﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻋﻘﻞ ﺍﻭﺭ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﻣﮑﺎﻥ ﺛﺎﺑﺖ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﻋﻠﺖ ﮐﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﻧﻬﯿﮟ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﻭﺍﺟﺐ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﮐﺎ ﺗﻌﻘﻞ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﯽ ﺫﺍﺕ ﮐﺎ ﺗﻌﻘﻞ ﺑﮭﯽ ﻋﻘﻞ ﺍﻭﻝ ﮐﮯ ﻭﺟﻮﺩ ﮐﮯ ﻭﺟﻮﺏ ﮐﺎ ﻻﺯﻣﻪ ﻫﮯ ﺍﻭﺭﺍﺱ ﮐﻮ ﻋﻠﺖ ﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﻧﻬﯿﮟ ﻫﮯ ـ ﺑﻬﺮ ﺻﻮﺭﺕ ﭼﻮﻧﮑﻪ ﻋﻘﻞ ﺍﻭﻝ ﻣﯿﮟ ﺟﻬﺎﺕ ﮐﺜﯿﺮﻩ ﭘﺎﺋﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﻫﯿﮟ، ﻟﻬﺬﺍ ﻫﺮ ﮐﺜﺮﺗﯽ ﺟﻬﺖ ﺑﻌﺪ ﻭﺍﻟﮯ ﻣﻤﮑﻨﺎﺕ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﻫﮯ، ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﮐﻪ ﻭﺍﺟﺐ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﮐﮯ ﺗﻌﻘﻞ ﺳﮯ، ﻋﻘﻞ ﺩﻭﻡ ﺍﻭﺭ ﻭﺟﻮﺏ ﻏﯿﺮ ﺧﻮﺩ ﮐﮯ ﺗﻌﻘﻞ ﺳﮯ، ﻭﺟﻮﺩ ﻧﻔﺲ ‏( ﺻﻮﺭﺕ ‏) ﻓﻠﮏ ﺍﻗﺼﯽ ﺍﻭﺭ ﺗﻌﻘﻞ ﺍﻣﮑﺎﻥ ﺫﺍﺗﯽ ﺳﮯ ﺟﺮﻡ ‏( ﺟﺴﻢ ‏) ﻓﻠﮏ ﺍﻗﺼﯽ ﻭﺟﻮﺩ ﻣﯿﮟ ﺁﺗﺎ ﻫﮯ ـ ﻣﺸﺎﺋﯽ، ﻋﻘﻮﻝ ﻃﻮﻟﯽ ﮐﯽ ﺗﻌﺪﺍﺩ 10 ﻋﻘﻮﻝ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﺮﺗﮯ ﻫﯿﮟ ‏[ 3 ‏] ـ ﻣﺮﺣﻮﻡ ﻣﻼ ﻫﺎﺩﯼ ﺳﺒﺰﻭﺍﺭﯼ، ﺷﺮﺡ ﻣﻨﻈﻮﻣﻪ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﺳﻠﺴﻠﻪ ﻣﯿﮟ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﻫﯿﮟ :

ﻓﺎﻟﻌﻘﻞ ﺍﻻﻭﻝ ﻟﺪﯼ ﺍﻟﻤﺸﺎﺋﯽ ﻭﺟﻮﺑﮫ ﻣﺒﺪﺀ ﺛﺎﻥ ﺟﺎﺋﯽ

ﻭ ﻋﻘﻠﮫ ﻟﺬﺍﺗﮫ ﻟﻠﻔﻠﮏ ﺩﺍﻥ ﻟﺪﺍﻥ ﺳﺎﻣﮏ ﻟﺴﺎﻣﮏ

ﻭ ﮬﮑﺬﺍ ﺣﺘﯽ ﻟﻌﺎﺷﺮ ﻭﺻﻞ ﻭﺍﻟﻔﯿﺾ ﻣﻨﮫ ﻓﯽ ﺍﻟﻌﻨﺎﺻﺮ ﺣﺼﻞ

ﯾﻌﻨﯽ ﻣﺸﺎﺋﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﻣﻮﺛﺮ ﻋﻘﻮﻝ ﮐﯽ ﺗﻌﺪﺍﺩ ﺩﺱ ﻫﮯ ﮐﻪ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﻧﻮ ﻋﻘﻮﻝ 9 ﺍﻓﻼﮎ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﻫﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺩﺳﻮﯾﮟ ﻋﻘﻞ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﻋﻘﻞ ﻓﻌﺎﻝ ﻫﮯ، ﺟﻮ ﻋﺎﻟﻢ ﮐﮯ ﻫﯿﻮﻻ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺗﺎﺑﻊ ﺟﺴﻤﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﮐﻮ ﺧﻠﻖ ﮐﺮﺗﮯ ﻫﮯ، ﺟﻮ ﺍﺱ ﮐﺎ ﻻﺯﻣﻪ ﻫﮯ ـ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﻓﻼﮎ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺣﺮﮐﺎﺕ ﮐﮯ ﺣﺎﻻﺕ ﮐﮯ ﺍﺛﺮﺍﺕ ﮐﯽ ﺍﺳﺘﻌﺪﺍﺩﻭﮞ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﺭﻓﺘﻪ ﺭﻓﺘﻪ ﺟﻮﻫﺮﯼ ﺻﻮﺭﺗﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺍﻋﺮﺍﺽ ﮐﻮ ﺍﯾﺠﺎﺩ ﮐﺮﺗﯽ ﻫﮯ ‏[ 4 ‏] ـ ﭘﺲ ﻣﺸﺎﺋﯽ ﻋﺎﻟﻢ ﮐﯽ ﺧﻠﻘﺖ ﮐﻮ ﻋﻘﻞ ﻓﻌﺎﻝ ﮐﮯ ﺫﺭﯾﻌﻪ ﺟﺎﻧﺘﮯ ﻫﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﮐﮭﺘﮯ ﻫﯿﮟ ﮐﻪ ﭼﻮﻧﮑﻪ ﻋﻘﻞ ﻓﻌﺎﻝ ﮐﮯ ﻣﺘﻌﺪﺩ ﺟﻬﺎﺕ ﻫﯿﮟ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﻭﻩ ﺑﻬﺖ ﺳﮯ ﻣﻌﻠﻮﻝ ﮐﻮ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﯽ ﻫﮯ ـ

ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺷﺮﺍﻗﯽ، ﻋﻘﻞ ﻋﺮﺿﯽ ﮐﮯ ﻣﻌﺘﻘﺪ ﻫﯿﮞـ ﯾﻪ ﻋﻘﻮﻝ، ﺍﯾﺴﯽ ﻋﻘﻮﻝ ﻫﯿﮟ ﮐﻪ ﺍﻭﻻً : ﺍﻥ ﮐﮯ ﺩﺭ ﻣﯿﺎﻥ ﻋﻠﺖ ﻭ ﻣﻌﻠﻮﻝ ﮐﺎ ﺭﺍﺑﻄﻪ ﻧﻬﯿﮟ ﻫﮯ ـ ﺛﺎﻧﯿﺎً : ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﻫﺮ ﺍﯾﮏ، ﻋﺎﻟﻢ ﻣﺎﺩﻩ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺍﻧﻮﺍﻉ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﻧﻮﻉ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﺑﻞ ﻣﯿﮟ ﻗﺮﺍﺭ ﭘﺎﺗﯽ ﻫﯿﮟ، ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻧﻮﻉ ﮐﮯ ﺭﺏ ﻫﯿﮟ ﮐﻪ ﺍﺱ ﻣﺎﺩﻩ ﮐﯽ ﺗﺪﺑﯿﺮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻫﺎﺗﮭـ ﻣﯿﮟ ﻫﮯ ـ ﺍﻥ ﻋﻘﻮﻝ ﮐﻮ : ” ﻣﺜﻞ ﺍﻓﻼﻃﻮﻧﯽ ” ﺑﮭﯽ ﮐﻬﺘﮯ ﻫﯿﮟ، ﮐﯿﻮﻧﮑﻪ ﺍﻓﻼﻃﻮﻥ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻭﺟﻮﺩ ﭘﺮ ﺍﺻﺮﺍﺭ ﮐﺮﺗﺎ ﺗﮭﺎ ـ ﺍﺷﺮﺍﻗﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﻧﻈﺮﯾﻪ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ، ﻃﻮﻟﯽ ﻋﻘﻮﻝ ﮐﺎ ﺳﻠﺴﻠﻪ، ﻋﻘﻮﻝ ﻋﺮﺿﯽ ﭘﺮ ﺧﺘﻢ ﻫﻮﺗﺎ ﻫﮯ، ﯾﻌﻨﯽ ﻃﻮﻟﯽ ﺩﺱ ﻋﻘﻮﻝ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﮐﻪ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺁﺧﺮﯼ ﻃﻮﻟﯽ ﻋﻘﻞ، ﻋﻘﻞ ﻓﻌﺎﻝ ﻫﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻋﻘﻮﻝ ﻋﺮﺿﯽ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﺳﻠﺴﻠﻪ ﺷﺮﻭﻉ ﻫﻮ ﺗﺎ ﻫﮯ ﮐﻪ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺩﺭ ﻣﯿﺎﻥ ﮐﺴﯽ ﻗﺴﻢ ﮐﯽ ﻋﻠﺖ ﻭ ﻣﻌﻠﻮﻝ ﮐﺎ ﺭﺍﺑﻄﻪ ﻧﻬﯿﮟ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﺗﺪﺑﯿﺮ ﻭ ﺗﺨﻠﯿﻖ ﻋﺎﻟﻢ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺫﻣﻪ ﻫﮯ ‏[ 5 ‏] ـ

ﻣﻼﺻﺪﺭﺍ ﺍﻭﺭ ﺣﮑﻤﺖ ﻣﺘﻌﺎﻟﯿﻪ ﮐﺎ ﺍﻋﺘﻘﺎﺩ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺍﺷﺮﺍﻗﯽ ﻓﻼﺳﻔﻪ ﮐﮯ ﻧﻈﺮﯾﻪ ﮐﯽ ﺗﺎﮐﯿﺪ ﮐﺮﺗﮯ ﻫﯿﻦ ‏[ 6 ‏] ﺍﻭﺭ ﻋﻘﻮﻝ ﻋﺮﺿﯽ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﭼﻨﺪ ﺩﻻﺋﻞ ﭘﯿﺶ ﮐﺮﺗﮯ ﻫﯿﮟ :

1 ـ ﭘﻬﻠﯽ ﺩﻟﯿﻞ : ” ﻗﺎﻋﺪﻩ ﺍﻣﮑﺎﻥ ﺍﺷﺮﺍﻑ ” ﻭﺟﻮﺩ ﻭ ﻣﻘﺪﻭﻣﮟ ﭘﺮ ﻣﺸﺘﻤﻞ ﻫﮯ :

ﺍﻟﻒ : ﻫﺮ ﻗﺴﻢ ﮐﮯ ﻓﻌﻠﯽ ﮐﻤﺎﻻﺕ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺷﺨﺺ ﮐﺎ ﻭﺟﻮﺩ ﺍﺱ ﺷﺨﺺ ﮐﮯ ﻭﺟﻮﺩ ﺳﮯ ﺷﺮﯾﻒ ﺗﺮ ﻫﮯ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﮐﻤﺎﻻﺕ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺻﺮﻑ ﭼﻨﺪ ﮐﻤﺎﻻﺕ ﻓﻌﻠﯿﺖ ﻣﯿﮟ ﺗﺒﺪﯾﻞ ﻫﻮﺋﮯ ﻫﻮﮞ ﺍﻭﺭﺍﮐﺜﺮ ﮐﻤﺎﻻﺕ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺑﺎﻟﻘﻮﻩ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﻫﯿﮟ، ﻣﺜﻼً ﺟﺲ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﻧﻮﻉ ﺍﻧﺴﺎﻧﯽ ﮐﮯ ﮐﻤﺎﻻﺕ ﺑﺎﻟﻔﻌﻞ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﻫﻮﮞ، ﻭﻩ ﺍﺱ ﻣﺎﺩﯼ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﺳﮯ ﺷﺮﯾﻒ ﺗﺮ ﻫﮯ، ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﻧﻮﻉ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﮯ ﺻﺮﻑ ﺑﻌﺾ ﮐﻤﺎﻻﺕ ﺑﺎﻟﻔﻌﻞ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﻫﻮﮞ ـ

ﺏ : ﻗﺎﻋﺪﻩ ﺍﻣﮑﺎﻥ ﺍﺷﺮﻑ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ، ﺍﮔﺮ ﺍﯾﮏ ﻣﻤﮑﻦ ﭼﯿﺰ ﻣﺤﻘﻖ ﻫﻮﺟﺎﺋﮯ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻣﻤﮑﻦ ﭼﯿﺰ ﮐﯽ ﺑﻪ ﻧﺴﺒﺖ ﻭﺟﻮﺩﯼ ﮐﻤﺎﻻﺕ ﮐﻢ ﺗﺮ ﻫﻮﮞ ﺗﻮ ﺍﺱ ﺷﺮﯾﻒ ﺗﺮ ﻣﻤﮑﻦ ﭼﯿﺰ ﮐﻮ ﺍﺱ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﭼﯿﺰ ﺳﮯ ﭘﻬﻠﮯ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﻫﻮﻧﺎ ﭼﺎﻫﺌﮯ ـ

ﺍﺱ ﺑﻨﺎﭘﺮ، ﺍﯾﮏ ﻧﻮﻉ ﮐﮯ ﻣﺎﺩﯼ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﮐﺎ ﻭﺟﻮﺩ، ﺗﻨﻬﺎ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻓﺮﺩ ﮐﮯ ﻭﺟﻮﺩ ‏( ﻋﻘﻮﻝ ﻋﺮﺿﯽ ‏) ﮐﯽ ﺩﻟﯿﻞ ﻫﮯ، ﻣﺜﺎﻝ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻣﺎﺩﯼ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﺎ ﻭﺟﻮﺩ ﺍﺱ ﺑﺎﺕ ﮐﯽ ﺩﻟﯿﻞ ﻫﮯ ﮐﻪ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﯽ ﻋﻘﻠﯽ ﻣﺜﺎﻝ ﭘﻬﻠﮯ ﻣﺮﺣﻠﻪ ﻣﯿﮟ ﻣﺤﻘﻖ ﻫﻮﺋﯽ ﻫﮯ ‏[ 7 ‏] ـ

ﺍﺗﻔﺎﻗﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻭﺟﻮﺩ ﻫﯿﮟ ﻧﻬﯿﮟ ﻫﯿﮟ، ﭘﺲ ﺧﻮﺩ ﻭﻩ ﺍﻧﻮﺍﻉ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺟﺎﺭﯼ ﻧﻈﺎﻡ، ﺍﯾﮏ ﻗﺴﻢ ﮐﮯ ﺣﻘﯿﻘﯽ ﻋﻠﺘﻮﮞ ﮐﮯ ﻣﻌﻠﻮﻝ ﻫﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﯾﻪ ﻋﻠﺘﯿﮟ ﻭﻫﯽ ﺟﻮﻫﺮ ﻫﯿﮟ، ﺟﻨﻬﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﻥ ﺍﻧﻮﺍﻉ ﮐﻮ ﻭﺟﻮﺩ ﻣﯿﮟ ﻻﯾﺎ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺗﺪﺑﯿﺮ ﻭ ﭘﺮﻭﺭﺵ ﮐﺎ ﺍﻫﺘﻤﺎﻡ ﮐﯿﺎ ﻫﮯ ـ ﺍﻧﮭﯿﮟ ﻣﺜﻞ ﺍﻓﻼﻃﻮﻧﯽ ﯾﺎ ﻋﻘﻮﻝ ﻋﺮﺽ ﮐﻬﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﻫﮯ ‏[ 8 ‏] ـ

3 ـ ﺗﯿﺴﺮﯼ ﺩﻟﯿﻞ : ﺭﺏ ﺍﻟﻨﻮﻉ ﮐﻮ ﺛﺎﺑﺖ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﻰ ﺗﯿﺴﺮﻯ ﺩﻟﯿﻞ ﮐﮯ ﭼﻨﺪ ﻣﻘﺪﻣﺎﺕ ﻫﯿﮟ :

ﺍﻟﻒ : ﻧﺒﺎﺗﺎﺕ ﮐﻰ ﺣﯿﺮﺕ ﺍﻧﮕﯿﺰ ﺗﺮﮐﯿﺐ، ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﺋﻰ ﺟﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﻰ ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺕ ﻧﻘﺶ ﻧﮕﺎﺭﻯ، ﺍﺱ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﻩ ﺍﻥ ﭘﺮ ﺣﺎﮐﻢ ﺍﯾﮏ ﺩﻗﯿﻖ ﺍﻭﺭ ﻣﺴﺘﺤﮑﻢ ﻧﻈﺎﻡ، ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﯾﮏ ﻋﻠﺖ ﮐﻰ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﻪ ﻋﻠﺖ ﮐﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﭘﯿﺪﺍ ﻧﻬﯿﮟ ﻫﻮ ﺳﮑﺘﮯ ﻫﯿﮟ ـ

ﺏ : ﯾﻪ ﻋﻠﺖ، ﻧﺒﺎﺗﺎﺗﻰ ﻃﺎﻗﺘﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻗﺪﺭﺕ ﻧﻬﯿﮟ ﻫﮯ، ﮐﯿﻮﻧﮑﻪ ﻧﺒﺎﺗﺎﺗﻰ ﻃﺎﻗﺘﯿﮟ ﻋﻠﻢ ﻭ ﺁﮔﺎﻫﻰ ﺳﮯ ﻓﺎﻗﺪﺍﻋﺮﺍﺽ ﻫﯿﮟ، ﺟﻮ ﺟﺴﻢ ﻣﯿﮟ ﺣﻠﻮﻝ ﮐﺮﮐﮯ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻣﻮﺿﻮﻉ ﻣﯿﮟ ﺗﻐﯿﺮ ﻭ ﺯﻭﺍﻝ ﮐﮯ ﺍﺛﺮ ﻣﯿﮟ ﺗﻐﯿﺮ ﻭ ﺯﻭﺍﻝ ﮐﺎ ﺳﺒﺐ ﺑﻦ ﺟﺎﺗﮯ ﻫﯿﮟ ـ

ﺝ : ﻣﺬﮐﻮﺭﻩ ﺍﻣﻮﺭ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﻰ ﺟﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﻰ ﺗﻨﻬﺎ ﻋﻠﺖ ﺟﻮ ﻫﺮ ﻋﻘﻠﻰ ﻣﺠﺮﺩ ﻫﮯ، ﺍﺱ ﻧﻮﻉ ﮐﺎ ﺍﺗﻬﻤﺎﻡ ﮐﺮﺗﻰ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺍﻣﻮﺭ ﮐﻮ ﺗﺪﺑﯿﺮ ﮐﺮﺗﻰ ﻫﮯ ـ

4 ـ ﭼﻮﺗﮭﻰ ﺩﻟﯿﻞ : ﭼﻮﻧﮑﻪ ﻫﺮ ﻧﻮﻉ ﮐﮯ ﺧﺎﺹ ﺍﻓﻌﺎﻝ ﻭ ﺁﺛﺎﺭ ﻫﯿﮟ، ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﻫﺮ ﻧﻮﻉ ﮐﻰ ﺍﯾﮏ ﺧﺎﺹ ﻣﺠﺮﺩ ﻋﻘﻞ ﻫﻮﮔﻰ ﺟﻮ ﺍﺱ ﻧﻮﻉ ﮐﮯ ﺍﻓﻌﺎﻝ ﻭ ﺁﺛﺎﺭ ﮐﺎ ﻣﺼﺪﺭ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﺗﻤﺎﻡ، ﻣﺎﺩﻯ ﺍﻧﻮﺍﻉ ﮐﮯ ﺍﻓﻌﺎﻝ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﻋﻘﻞ ﻣﺠﺮﺩ ﺳﮯ ﻧﺴﺒﺖ ﻧﻬﯿﮟ ﺩﯾﺎ ﺟﺎﺳﮑﺘﺎ ﻫﮯ،

‏[ 9 ‏] ﺍﺱ ﺑﻨﺎ ﭘﺮ ﻣﺜﻞ ﺍﻓﻼﻃﻮﻧﻰ ﯾﺎ ﻋﻘﻮﻝ ﻋﺮﺿﯽ ﮐﮯ ﻣﺘﻌﻘﺪ ﻫﻮﺋﮯ ﻫﯿﮟ ـ

‏[ 1 ‏] ﺷﯿﺮﺭﺍﻧﻰ، ﻋﻠﻰ، ﺗﺮﺟﻤﮫ ﻭ ﺷﺮﺡ ﺑﺪﺍﯾۃ، ﺝ 4 ، ﺹ .236

‏[ 2 ‏] ﺣﺴﻦ ﺯﺍﺩﻩ ﺁﻣﻠﻰ، ﺣﺴﻦ، ﻭﺣﺪﺕ ﺍﺯ ﺩﯾﺪﮔﺎ ﻋﺎﺭﻑ ﻭ ﺣﮑﯿﻢ، ﺹ ;108 ﻃﺒﺎﻃﺒﺎﺋﻰ، ﻣﺤﻤﺪ ﺣﺴﯿﻦ، ﺑﺪﺍﯾۃ ﺍﻟﺤﮑﻤۃ، ﺹ ;216 ﺍﯾﻦ ﺣﻤﺮۃ ﺍﻟﻔﻨﺎﺭﻯ، ﻣﺼﺒﺎﺡ ﺍﻻﻧﺲ، ﺹ .191

‏[ 3 ‏] ﺍﻻﻟﮭﯿﺎﺕ ﺍﻟﺸﻔﺎﺀ، ﺍﻟﻤﻘﻠۃ ﺍﻟﺘﺎﺳﻌۃ، ﺍﻟﻔﺼﻞ ﺍﻟﺮﺍﺑﻊ ﻭﺍﻟﺨﺎﻣﺲ .

‏[ 4 ‏] ﺳﺒﺰ ﻭﺍﺭﻯ، ﻣﻼﮬﺎﺩﻯ، ﺷﺮﺡ ﺍﻟﻤﻨﻈﻮﻣۃ، ﺗﺼﺤﯿﺢ، ﺣﺴﻦ ﺯﺍﺩﻩ ﺁﻣﻠﻰ، ﺝ 3 ، ﺹ 672 ـ .674

‏[ 5 ‏] ﻧﮭﺎ ﯾۃ ﺍﻟﺤﮑﻤۃ، ﺹ 382 ـ .383

‏[ 6 ‏] ﺻﺪﺭ ﺍﻟﺪﯾﻦ ﻣﺤﻤﺪ ﺍﻟﺸﯿﺮﺍﺯﻯ، ﺍﻻﺳﻔﺎﺭ ﺍﻻﺭﯾﻌۃ، ﺝ 2 ، ﺹ 46 ـ 81 ﻭ ﺝ 7 ، ﺹ 169 ـ 171 ﻭ 258 ـ .281

‏[ 7 ‏] ﺣﮑﻤۃ ﺍﻻﺷﺮﺍﻕ، ﺹ 143 ; ﺷﺮﺡ ﺣﮑﻤۃ ﺍﻻﺷﺮﺍﻕ، ﺹ 349 ـ 348

‏[ 8 ‏] ﺍﯾﻀﺎً، ﺹ 143 ـ ;144 ﺷﺮﺡ ﺣﮑﻤۃ ﺍﻻﺷﺮﺍﻕ ، ﺹ 349 ـ .351

‏[ 9 ‏] ﺍﻟﻤﻄﺎﺭﺣﺎﺕ، ﺹ 455 ـ ;459 ﺍﻟﺴﻔﺎﺭ، ﺝ 2 ، ﺹ 53 ـ .55

Via : http://islamquest.net/ur

Advertisements

ﻭﺍﺟﺐ ﺍﻟﻮﺟﻮﺩ، ﺟﻮ ﺑﺴﯿﻂ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺫﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﻗﺴﻢ ﮐﯽ ﺗﺮﮐﯿﺐ ﻧﻬﯿﮟ ﻫﮯ، ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮭﻪ ﻣﻤﮑﻦ ﺍﻟﻮﺟﻮﺩ ﮐﺎ ﮐﯿﺴﮯ ﺗﺼﻮﺭ ﮐﯿﺎ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﺎ ﻫﮯ؟

ﺍﮔﺮ ﻫﻢ ﻗﺒﻮﻝ ﮐﺮﯾﮟ ﮐﻪ ﻭﺍﺟﺐ ﺍﻟﻮﺟﻮﺩ ﺑﺴﯿﻂ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺫﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﻗﺴﻢ ﮐﯽ ﺗﺮﮐﯿﺐ ﻧﻬﯿﮟ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮭﻪ ﮐﺴﯽ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻣﺨﻠﻮﻕ ﮐﻮ ﻓﺮﺽ ﻧﻬﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﺎ ﻫﮯ، ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮭﻪ ﻣﻤﮑﻦ ﺍﻟﻮﺟﻮﺩ ﮐﻮ ﮐﯿﺴﮯ ﺗﺼﻮﺭ ﮐﯿﺎ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﺎ ﻫﮯ؟

ﺍﺟﻤﺎﻟﯽ ﺟﻮﺍﺏ :

ﻧﻈﺎﻡ ﻭﺟﻮﺩ ﮐﮯ ﻃﻮﻟﯽ ﺳﻠﺴﻠﻪ ﻣﯿﮟ، ﺗﻤﺎﻡ ﻭﺟﻮﺩﯼ ﺣﻘﺎﺋﻖ ﮐﮯ ﻫﻮﺗﮯ ﻫﻮﺋﮯ ، ﻣﺨﺘﻠﻒ ﻣﺮﺍﺗﺐ ﺍﻭﺭ ﻃﺒﻘﺎﺕ ﭘﺎﺋﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﻫﯿﮟ، ﺍﻥ ﻣﺮﺍﺗﺐ ﮐﺎ ﻭﺟﻮﺩ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺍﺷﺘﺮﺍﮎ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺧﺘﻼﻑ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ – ﺍﺱ ﺳﻠﺴﻠﻪ ﮐﺎ ﺑﻠﻨﺪ ﺗﺮﯾﻦ ﻣﺮﺗﺒﻪ ﺻﺮﻑ ﺣﻖ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﺳﮯ ﻣﺘﻌﻠﻖ ﻫﮯ ﺟﻮ ﻭﺟﻮﺩ ﻣﺤﺾ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺷﻨﺎﺧﺖ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺣﺪ ﻧﻬﯿﮟ ﻫﮯ – ﻟﻬﺬﺍ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺫﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﻗﺴﻢ ﮐﯽ ﺗﺮﮐﯿﺐ ﻧﻬﯿﮟ ﭘﺎﺋﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﻗﯽ ﺗﻤﺎﻡ ﻣﺨﻠﻮﻗﺎﺕ ﻣﻌﻠﻮﻝ ﮐﮯ ﻋﻨﻮﺍﻥ ﺳﮯ ﺫﺍﺕ ﺑﺎﺭﯼ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﮐﯽ ﺁﯾﺖ، ﻣﻈﻬﺮ، ﺳﺎﯾﻪ ﺍﻭﺭ ﻣﺨﻠﻮﻕ ﮐﮯ ﻣﺎﻧﻨﺪ ﻫﯿﮟ، ﺍﻭﺭ ﭼﻮﻧﮑﻪ ﯾﻪ ﺍﯾﮏ ﻣﺤﺪﻭﺩ ﺍﻭﺭ ﮐﻤﺰﻭﺭ ﻣﺨﻠﻮﻕ ﻫﯿﮟ، ﺍﺱ ﻟﺤﺎﻅ ﺳﮯ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﻋﺪﻡ ﻭﺟﻮﺩ ﮐﮯ ﭘﻬﻠﻮ ﭘﺎﺋﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﻫﯿﮟ، ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻭﺟﻪ ﺳﮯ ﯾﻪ ﻣﺮﮐﺐ ﻫﯿﮟ، ﻟﯿﮑﻦ ﻭﺍﺟﺐ ﺍﻟﻮﺟﻮﺩ، ﺑﺴﯿﻂ ﻫﻮﻧﮯ ﺍﻭﺭ ﻭﺟﻮﺩ ﻻﻣﺘﻨﺎﻫﯽ ﻫﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﺳﺒﺐ، ﮐﻮﺋﯽ ﺷﺮﯾﮏ ﻧﻬﯿﮟ ﺭﮐﮭﺘﺎ ﻫﮯ، ﺑﺎﺭﯼ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﮐﮯ ﻭﺟﻮﺩ ﮐﮯ ﻃﻮﻝ ﻣﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻣﻌﻠﻮﻝ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ، ﺳﺎﯾﻪ ﮐﮯ ﺷﺎﺧﺺ ﺳﮯ ﻭﺍﺑﺴﺘﮕﯽ ﮐﮯ ﻣﺎﻧﻨﺪ، ﻣﻤﮑﻨﺎﺕ، ﺑﺎﺭﯼ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﺳﮯ ﺭﺑﻂ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﻫﯿﮟ، ﻧﺘﯿﺠﻪ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻭﺍﺟﺐ ﺍﻟﻮﺟﻮﺩ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﺑﺴﯿﻂ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﻤﮑﻦ ﺍﻟﻮﺟﻮﺩ ﻣﺮﮐﺐ ﺍﻭﺭ ﻣﺤﺪﻭﺩ ﻣﺨﻠﻮﻕ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﺮﮐﺐ ﻣﯿﮟ ﯾﻪ ﻃﺎﻗﺖ ﻧﻬﯿﮟ ﮐﻪ ﻭﻩ ﻭﺍﺟﺐ ﺍﻟﻮﺟﻮﺩ ﮐﮯ ﻋﺮﺽ ﻣﯿﮟ ﺭﻫﮯ – ﺑﻠﮑﻪ ﻭﻩ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻃﻮﻝ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺟﻠﻮﻩ ﺍﻭﺭ ﺷﺎﻥ ﮐﯽ ﺣﯿﺜﯿﺖ ﺳﮯ ﻫﻮﺗﺎ ﻫﮯ – ﺑﺎﺭﯼ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﮐﺎ ﺑﺴﯿﻂ ﻫﻮﻧﺎ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻭﺟﻮﺩ ﮐﯽ ﺷﺪﺕ ﮐﯽ ﻭﺟﻪ ﺳﮯ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﻤﮑﻨﺎﺕ ﮐﯽ ﺗﺮﮐﯿﺐ ﻭﺟﻮﺩ ﮐﯽ ﻣﺤﺪﻭﺩﯾﺖ ﮐﯽ ﻭﺟﻪ ﺳﮯ ﻫﻮﺗﯽ ﻫﮯ –

Detailed Answer

ﺣﮑﻤﺖ ﻣﺘﻌﺎﻟﯿﻪ ﮐﮯ ﭘﯿﺮﻭﮐﺎﺭ ﻭﺣﺪﺕ ﺗﺸﮑﯿﮑﯽ ﮐﮯ ﻣﻌﺘﻘﺪ ﻫﯿﮟ، ﺍﻧﻬﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﺑﺘﺪﺍًﺀ ﻋﺎﻟﻢ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﮐﺜﺮﺗﻮﮞ ﮐﻮ ﺩﻭ ﺣﺼﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﻘﺴﯿﻢ ﮐﯿﺎ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﻭﻩ ﺍﻋﺘﻘﺎﺩ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﻫﯿﮟ ﮐﻪ ﺍﻥ ﮐﺜﺮﺗﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﻗﺴﻢ ﻣُﺘﺒﺎﺋِﻨﻪ ﮐﺜﺮﺗﯿﮟ ﻫﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻗﺴﻢ ﻭﻩ ﮐﺜﺮﺗﯿﮟ ﻫﯿﮟ ﺟﻮ ﻭﺣﺪﺕ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﭘﻠﭩﺘﯽ ﻫﯿﮟ – ﺍﺱ ﺳﻠﺴﻠﻪ ﻣﯿﮟ ﻭﺟﻮﺩ ﮐﯽ ﮔﺮﺩﺵ ﻋﺪﺩ ﮐﯽ ﮔﺮﺩﺵ ﻫﮯ – ﺟﯿﺴﮯ ﻋﺪﺩ ﻣﯿﮟ ﺩﻭ ﻗﺴﻢ ﮐﯽ ﮐﺜﺮﺕ ﮐﺎ ﻭﺟﻮﺩ ﻫﮯ : ﺍﯾﮏ ﻗﺴﻢ ﮐﯽ ﮐﺜﺮﺕ، ﻣﻌﺪﻭﺩ ﮐﮯ ﻟﺤﺎﻅ ﺳﮯ ﻫﮯ، ﺟﯿﺴﮯ ﺩﺱ ﮐﺘﺎﺑﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺩﺱ ﻗﻠﻢ ﻭﻏﯿﺮﻩ، ﺍﻭﺭ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﮐﺜﺮﺕ ﻋﺪﺩ ﮐﮯ ﻟﺤﺎﻅ ﺳﮯ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﻭﻩ ﻭﺣﺪﺕ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﭘﻠﭩﺘﯽ ﻫﮯ، ﺟﯿﺴﮯ ﺩﺱ، ﺑﯿﺲ، ﺗﯿﺲ ﺍﻭﺭ ﭼﺎﻟﯿﺲ ﻭﻏﯿﺮﻩ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﺋﯽ ﺟﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﮐﺜﺮﺕ – ﮐﯿﻮﻧﮑﻪ ﺍﻥ ﺍﻋﺪﺍﺩ ﮐﺎ ﺍﺷﺘﺮﺍﮎ ﺍﻭﺭ ﺍﻣﺘﯿﺎﺯ ﺧﻮﺩ ﻋﺪﺩ ﻣﯿﮟ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺟﻨﺒﯽ ﮐﮯ ﻣﺘﻌﺪﺩ ﺍﻋﺪﺍﺩ ﻣﯿﮟ ﻭﺍﻗﻊ ﻫﻮﻧﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﮔﻨﺠﺎﺋﺶ ﻧﻬﯿﮟ ﻫﮯ ﮐﻪ ﺍﻥ ﮐﯽ ﮐﺜﺮﺕ ﻭﺣﺪﺕ ﺍﻭﺭ ﺍﻭﺭ ﺍﺻﻞ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﭘﻠﭧ ﻧﻪ ﺟﺎﺋﮯ – ﻭﺟﻮﺩ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺩﻭ ﻗﺴﻢ ﮐﯽ ﮐﺜﺮﺕ ﭘﺎﺋﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﻫﮯ – ﺍﯾﮏ ﻣﻮﺿﻮﻋﯽ ﮐﺜﺮﺕ ﻫﮯ ﺟﻮ ﻣﺎﻫﯿﺖ ﮐﮯ ﻟﺤﺎﻅ ﺳﮯ ﻫﻮﺗﯽ ﻫﮯ ، ﻟﻬﺬﺍ ﯾﻪ ﮐﺜﺮﺕ ﻓﺎﻗﺪ ﻭﺣﺪﺕ ﻫﮯ – ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺯﻣﯿﻦ ﺍﻭﺭ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺁﺳﻤﺎﻥ ﮐﮯ ﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﭘﺎﺋﯽ ﺟﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺟﯿﺴﯽ ﮐﺜﺮﺕ – ﺩﻭﺳﺮﯼ ﮐﺜﺮﺕ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﺴﯽ ﮐﺜﺮﺕ ﻫﮯ ﺟﻮ ﺧﻮﺩ ﻭﺟﻮﺩ ﮐﮯ ﻟﺤﺎﻅ ﺳﮯ ﻫﻮﺗﯽ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﻭﺣﺪﺕ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﭘﻠﭩﺘﯽ ﻫﮯ – ﻋﻠﯿّﺖ ﻭ ﻣﻌﻠﻮﻟﯿّﺖ، ﺣﺪﻭﺙ ﻭ ﻗِﺪﻡ ﺍﻭﺭ ﺗﺠﺮّﺩ ﺍﻭﺭ ﻣﺎﺩﯾﺖ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﺋﯽ ﺟﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﮐﺜﺮﺕ ﮐﮯ ﻣﺎﻧﻨﺪ –

ﺣﮑﻤﺖ ﻣﺘﻌﺎﻟﯿﻪ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ، ﺟﺲ ﻃﺮﺡ ﻋﺪﺩ، ﻋﺪﺩ ﻫﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺤﺎﻅ ﺳﮯ ﻣﻨﻔﺼﻞ ﮐﺎ ﮈﮬﺎﻧﭽﻪ ﺍﻭﺭ ﻗﺎﺑﻞ ﺗﻘﺴﯿﻢ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﺧﺎﺹ ﻣﺮﺍﺗﺐ ﻣﯿﮟ ﻇﺎﻫﺮ ﻫﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﭘﯿﺶ ﻧﻈﺮ ﯾﺎ ﻣﺘﻨﺎﻫﯽ ﻫﮯ ﯾﺎ ﻏﯿﺮ ﻣﺘﻨﺎﻫﯽ، ﯾﺎ ﺯﻭﺝ ﻫﮯ ﯾﺎ ﻓﺮﺩ ﻭﺟﻮﺩ ﮐﮯ ﺑﮭﯽ، ﻭﺟﻮﺩ ﻫﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﭘﯿﺶ ﻧﻈﺮ ﮐﭽﮭﻪ ﺍﺣﮑﺎﻡ ﻫﯿﮟ، ﺟﯿﺴﮯ، ﺑﺴﯿﻂ ﻫﻮﻧﺎ، ﺍﺻﺎﻟﺖ، ﺑﺮﺍﺑﺮﯼ ﯾﺎ ﺷﮯ ﻫﻮﻧﺎ – ﻟﯿﮑﻦ ﭼﻮﻧﮑﻪ ﻭﺟﻮﺩ ﺑﻈﺎﻫﺮ ﮐﺜﺮﺕ ﻣﯿﮟ ﻫﮯ ﺍﺱ ﻟﺤﺎﻅ ﺳﮯ ﮐﭽﮭﻪ ﺍﻭﺭ ﺍﺣﮑﺎﻡ ﻫﯿﮟ، ﺟﯿﺴﮯ، ﻋﻠﯿّﺖ، ﻣﻌﻠﻮﻟﯿّﺖ ﺍﻭﺭ ﺣﺪﻭﺙ ﻭ ﻗِﺪﻡ ‏[ 1 ‏] – ﺍﺏ ﺟﺒﮑﻪ ﻭﺟﻮﺩ ﮐﮯ ﻃﻮﻟﯽ ﺳﻠﺴﻠﻪ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﺣﮑﻤﺖ ﻣﺘﻌﺎﻟﯿﻪ ﻣﯿﮟ ﺟﻮ ﺧﺎﮐﻪ ﭘﯿﺶ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﻫﮯ، ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﻭﺟﻮﺩ ﮐﮯ ﺗﻤﺎﻡ ﺣﻘﺎﺋﻖ ﭘﺎﺋﮯ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ ، ﻣﻮﺟﻮﺩﯾﺖ ﻣﯿﮟ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﻣﺮﺍﺗﺐ ﺍﻭﺭ ﻃﺒﻘﺎﺕ ﭘﺎﺋﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﻫﯿﮟ ﮐﻪ ﺍﻥ ﻭﺟﻮﺩﯼ ﻣﺮﺍﺗﺐ ﮐﮯ ﻭﺟﻮﺩ ﻭ ﻫﺴﺘﯽ ﻣﯿﮟ ﺍﺷﺘﺮﺍﮎ ﺑﮭﯽ ﭘﺎﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻣﺘﯿﺎﺯ ﻭ ﺍﺧﺘﻼﻑ ﺑﮭﯽ، ﺟﯿﺴﮯ ﻧﻮﺭ ﮐﮯ ﻣﺮﺍﺗﺐ ﻣﯿﮟ ﺷﺪﺕ ﺍﻭﺭ ﺿﻌﻒ ﮐﺎ ﻫﻮﻧﺎ – ﻟﻬﺬﺍ ﺍﺱ ﺳﻠﺴﻠﻪ ﻣﯿﮟ ﻋﺎﻟﯽ ﺗﺮﯾﻦ ﻣﺮﺗﺒﻪ ﺣﻖ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﺳﮯ ﻣﺘﻌﻠﻖ ﻫﮯ، ﺟﻮ ﻣﺤﺾ ﻭﺟﻮﺩ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻭﺟﻮﺩ ﮐﮯ ﻻﻣﺘﻨﺎﻫﯽ ﻫﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﺳﺒﺐ، ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﻗﺴﻢ ﮐﯽ ﻣﺎﻫﯿﺖ ﺍﻭﺭ ﻭﺟﻮﺩﯼ ﺣﺪ ﻧﻬﯿﮟ ﭘﺎﺋﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﻫﮯ – ﻟﯿﮑﻦ ﺑﺎﻗﯽ ﻣﺨﻠﻮﻗﺎﺕ ﭼﻮﻧﮑﻪ ﺑﺎﺭﯼ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﮐﮯ ﻣﻌﻠﻮﻝ ﻫﯿﮟ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﻣﮑﻤﻞ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺫﺍﺕ ﺑﺎﺭﯼ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﺳﮯ ﻣﺮﺑﻮﻁ ﺍﻭﺭ ﻣﻨﺤﺼﺮ ﻫﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻣﺜﺎﻝ ﮐﺴﯽ ﭼﯿﺰ ﮐﮯ ﺳﺎﯾﻪ ﮐﮯ ﻣﺎﻧﻨﺪ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﺟﺲ ﻃﺮﺡ ﺁﻓﺘﺎﺏ ﮐﯽ ﺭﻭﺷﻨﯽ ﮐﺎ ﺧﻮﺩ ﺁﻓﺘﺎﺏ ﺳﮯ ﺭﺑﻂ ﻫﻮﺗﺎ ﻫﮯ ﯾﺎ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﮯ ﻧﻔﺲ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺫﻫﻨﯽ ﺗﺼﻮﺭ، ﺍﻥ ﺳﺐ ﮐﯽ ﻭﺍﺑﺴﺘﮕﯽ ﻧﻔﺲ ﮐﯽ ﺷﻨﺎﺧﺖ ﺳﮯ ﻫﻮﺗﯽ ﻫﮯ، ﺟﺒﮑﻪ ﺍﮔﺮ ﻧﻔﺲ ﺍﯾﮏ ﻟﻤﺤﻪ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺗﻮﺟﻪ ﮐﻮ ﻫﭩﺎﺩﮮ ﺗﻮ ﺍﻥ ﺗﺼﻮﺭﺍﺕ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﺛﺮ ﺑﺎﻗﯽ ﻧﻬﯿﮟ ﺭﻫﺘﺎ ﻫﮯ – ﮐﯿﺎ ﺍﺏ ﯾﻪ ﻓﺮﺽ ﮐﯿﺎ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﺎ ﻫﮯ ﮐﻪ ﻧﻔﺲ ﮐﮯ ﯾﻪ ﺗﺼﻮﺭﺍﺕ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺭﮐﺎﻭﭦ ﺑﻦ ﺳﮑﺘﮯ ﻫﯿﮟ؟ ﯾﺎ ﺳﻮﺭﺝ ﮐﯽ ﮐﺮﻥ ﮐﻮ ﺳﻮﺭﺝ ﮐﮯ ﻋﺮﺽ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﻣﺨﻠﻮﻕ ﻓﺮﺽ ﮐﯿﺎ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﺎ ﻫﮯ، ﺟﺲ ﮐﯽ ﺷﻨﺎﺧﺖ ﺳﻮﺭﺝ ﮐﮯ ﺟﺴﻢ ﮐﯽ ﻣﺮﻫﻮﻥ ﻣﻨﺖ ﻫﮯ؟ ﭼﻮﻧﮑﻪ ﺣﻖ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﮐﺎ ﻭﺟﻮﺩ ﻣﺤﺾ ﺑﺴﯿﻂ ﻫﮯ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﻫﺴﺘﯽ ﮐﮯ ﺣﻘﺎﺋﻖ، ﻭﺟﻮﺩ ﮐﮯ ﻋﻨﻮﺍﻥ ﺳﮯ ﭘﺎﺋﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﻫﯿﮟ } ﺑﺴﯿﻂ ﺍﻟﺤﻘﯿﻘﻪ ﮐﻞ ﺍﻻﺷﯿﺎﺀ { ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ ﺍﺷﯿﺎﺀ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺷﺌﮯ ﻭﺳﯿﻊ } ﺑﺴﯿﻂ { ﻫﻮﻧﮯ ﮐﺎ ﻋﻨﻮﺍﻥ ﻧﻬﯿﮟ ﺭﮐﮭﻪ ﺳﮑﺘﯽ ﻫﮯ } ﻭﻟﯿﺲ ﺑﺸﺊ ﻣﻨﮭﺎ { ﺍﻭﺭ ﺣﻖ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﻣﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﺑﮭﯽ ﮐﻤﺎﻝ ﮐﺎ ﻓﻘﺪﺍﻥ ﻧﻬﯿﮟ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﻭﻫﯽ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺗﻤﺎﻡ ﮐﻤﺎﻻﺕ ﮐﺎ ﺳﺮﭼﺸﻤﻪ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﺗﻤﺎﻡ ﮐﻤﺎﻻﺕ ” ﻓﯿﺾ ” ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ ﺍُﺳﯽ ﺳﮯ ﺟﺎﺭﯼ ﻫﻮﺗﮯ ﻫﯿﮟ – ﺑﯿﺸﮏ ﻭﺍﺟﺐ ﺍﻟﻮﺟﻮﺩ، ﭼﻮﻧﮑﻪ ﺑﺴﯿﻂ ﻣﺤﺾ ﻫﮯ، ﻟﻬﺬﺍ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ } ﺛﺎﻧﯽ { ﺍﻭﺭ ﺷﺮﯾﮏ ﻧﺎﻣﻤﮑﻦ ﻫﮯ، ﮐﯿﻮﻧﮑﻪ ﺍﮔﺮ ﻭﺍﺟﺐ ﺍﻟﻮﺟﻮﺩ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺷﺮﯾﮏ ﻫﻮﺗﺎ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﻣﺨﺼﻮﺹ ﮐﻤﺎﻝ ﻫﻮﺗﺎ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﮯ ﮐﻤﺎﻝ ﺳﮯ ﻣﺤﺮﻭﻡ ﻫﻮﺗﺎ، ﭘﺲ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﻫﺮ ﺍﯾﮏ ﻭﺟﻮﺩ ﻭ ﻋﺪﻡ ﻭﺟﻮﺩ ﮐﺎ ﻣﺮﮐﺐ ﻫﮯ ﮐﻪ ﺗﺮﮐﯿﺐ ﮐﯽ ﯾﻪ ﻗﺴﻢ } ﻭﺟﻮﺩ ﻭ ﻋﺪﻡ ﮐﯽ ﺗﺮﮐﯿﺐ، ﺑﻪ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﺩﯾﮕﺮ ﻭﺟﻮﺩ ﻭ ﻋﺪﻡ { ﺗﺮﮐﯿﺐ ﮐﯽ ﺑﺪﺗﺮﯾﻦ ﻗﺴﻢ ﻫﮯ ‏[ 2 ‏] –

ﻧﺘﯿﺠﻪ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ، ﻣﻤﮑﻦ ﺍﻟﻮﺟﻮﺩ ﺍﭘﻨﯽ ﻭﺟﻮﺩﯼ ﻣﺤﺪﻭﺩﯾﺖ ﮐﯽ ﻭﺟﻪ ﺳﮯ ﺣﻀﺮﺕ ﺣﻖ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﮐﮯ ﻭﺟﻮﺩ ﮐﮯ ﻋﺮﺽ ﻣﯿﮟ ﺭﻫﻨﮯ ﮐﯽ ﻗﺪﺭﺕ ﻧﻬﯿﮟ ﺭﮐﮭﺘﺎ ﻫﮯ، ﮐﯿﻮﻧﮑﻪ ﻭﺟﻮﺩ ﺑﺎﺭﯼ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﺑﺴﯿﻂ ﺍﻭﺭ ﻻﻣﺤﺪﻭﺩ ﻫﻮﻧﮯ ﮐﯽ ﻭﺟﻪ ﺳﮯ ” ﺷﺮﯾﮏ ﺳﮯ ﻣﻨﺰّﻩ ” ﻫﮯ – ﺑﻠﮑﻪ ﻣﻤﮑﻦ ﺍﻟﻮﺟﻮﺩ، ﺑﺎﺭﯼ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﮐﮯ ﻭﺟﻮﺩ ﮐﮯ ﻃﻮﻝ ﻣﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﺎ ﻣﻌﻠﻮﻝ ﺍﻭﺭ ﻭﺍﺿﺢ ﺗﺮ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺁﯾﺎﺕ ﮐﺎ ﺟﻠﻮﻩ ﺍﻭﺭ ﻣﻈﻬﺮ ﻫﮯ – ﺍﻭﺭ ﻣﺸﺨﺺ ﻫﮯ ﮐﻪ ﭼﻮﻧﮑﻪ، ﻣﻤﮑﻦ ﺍﻟﻮﺟﻮﺩ، ﻣﺤﺪﻭﺩ ﻫﮯ، ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﺗﺮﮐﯿﺐ، ﻣﺎﻫﯿﺖ، ﺗﻐﯿّﺮ ﻭ ﺗﺒﺪّﻝ ﻭﻏﯿﺮﻩ } ﻣﻤﮑﻨﺎﺕ ﮐﮯ ﻗﺴﻢ ﻣﯿﮟ { ﺟﯿﺴﮯ ﺿﻌﻒ ﺍﻭﺭ ﻣﺤﺪﻭﺩﯾﺘﯿﮟ، ﻓﻘﺪﺍﻥ ﻭ ﻧﺎﺩﺍﺭﯼ ﮐﯽ ﻭﺟﻪ ﺳﮯ ﻫﻮﺗﯽ ﻫﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﯾﻪ ﻣﻌﻠﻮﻝ ﮐﯽ ﺧﺎﺻﯿﺖ ﻫﮯ ﮐﻪ ﻋﻠﺖ ﺳﮯ ﻭﺟﻮﺩﯼ ﺭﺍﺑﻄﻪ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﮐﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ ﻋﻠﺖ ﮐﮯ ﺗﻤﺎﻡ ﮐﻤﺎﻻﺕ ﻧﻬﯿﮟ ﺭﮐﮭﺘﺎ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﻋﻠﺖ، ﻣﻌﻠﻮﻝ ﮐﮯ ﮐﻤﺎﻻﺕ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﻩ، ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﻤﺎﻻﺕ ﺑﮭﯽ ﺭﮐﮭﺘﯽ ﻫﮯ – ﺍﺱ ﻟﺤﺎﻅ ﺳﮯ ﻭﺍﺟﺐ ﺍﻟﻮﺟﻮﺩ ﺑﺴﯿﻂ ﻣﺤﺾ ﻫﮯ، ﺍﻭﺭ ﻣﻤﮑﻦ ﺍﻟﻮﺟﻮﺩ ﻣﺮﮐﺐ ﺍﻭﺭ ﻣﺤﺪﻭﺩ ﻫﮯ – ﺍﻣﺎﻡ ﺧﻤﯿﻨﯽ } ﺭﺡ { ﮐﯽ ﺗﻌﺒﯿﺮ ﻣﯿﮟ “: ” ﻭﺟﻮﺩ ” ، ﺧﯿﺮ ﻭ ﺷﺮﺍﻓﺖ ﺍﻭﺭ ﺩﺭﺧﺸﻨﺪﮔﯽ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ” ﻋﺪﻡ ” ، ﺷﺮ، ﭘﺴﺘﯽ، ﺗﺎﺭﯾﮑﯽ ﺍﻭﺭ ﮐﺪﻭﺭﺕ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﺟﺲ ﻗﺪﺭ ﻭﺟﻮﺩ ﮐﺎﻣﻞ ﺗﺮﻫﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺧﯿﺮ ﻭ ﺷﺮﺍﻓﺖ ﻣﮑﻤﻞ ﺗﺮ ﻫﮯ ﯾﻬﺎﮞ ﺗﮏ ﮐﻪ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﺴﮯ ﻭﺟﻮﺩ ﭘﺮ ﻣﻨﺘﻬﯽ ﻫﻮﺗﺎ ﻫﮯ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﻗﺴﻢ ﮐﺎ ﻋﺪﻡ ﻧﻬﯿﮟ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﻪ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﻤﺎﻝ ﻫﮯ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﻗﺴﻢ ﮐﺎ ﻧﻘﺺ ﻧﻬﯿﮟ ﻫﮯ ﺍﻭﺭ ﺗﻤﺎﻡ ﺧﯿﺮﻭﺷﺮﺍﻓﺖ ﺍﻭﺭ ﺗﺠّﻠﯿﺎﺕ ﺣﻖ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﺳﮯ ﻣﺮﺑﻮﻁ ﻫﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﮐﻮﺋﯽ ﺧﯿﺮ ﻭ ﮐﻤﺎﻝ ﺣﻘﯿﻘﯽ ﻧﻬﯿﮟ ﻫﮯ، ﻣﮕﺮ ﯾﻪ ﮐﻪ ﺍﺱ ﺳﮯ ﻣﺮﺑﻮﻁ ﻫﻮ، ﺍﺱ ﮐﮯ ﺫﺭﯾﻌﻪ ﻫﻮ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﻫﻮ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﻫﻮ } ﺑﻪ ﻭ ﻣﻦﻩ ﻭ ﻋﻠﯽﻩ { ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺗﻤﺎﻡ ﻣﺮﺍﺗﺐ ﮐﮯ ﺧﯿﺮﻭﮐﻤﺎﻻﺕ ﺍﺱ ﺳﮯ ﻣﻨﺴﻮﺏ ﻫﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﺍﻋﺘﺒﺎﺭ ﺳﮯ ﻫﻮﺗﮯ ﻫﯿﮟ –

‏[ 3 ‏] ”

‏[ 1 ‏] ﺟﻮﺍﺩﻯ ﺁﻣﻠﻰ، ﻋﺒﺪﺍﻟﻠَّﻪ، ﺗﺤﺮﯾﺮ ﺗﻤﻬﯿﺪ ﺍﻟﻘﻮﺍﻋﺪ، ﺍﻟﺘﺮﮐّﻪ ﺻﺎﺋﻦ ﺍﻟﺪﯾﻦ ﻋﻠﻰ ﺑﻦ ﻣﺤﻤﺪ، ﺹ .319

‏[ 2 ‏] ﺟﻮﺍﺩﻯ ﺁﻣﻠﻰ ﻋﺒﺪﺍﻟﻠَّﻪ، ﺷﺮﺡ ﺣﮑﻤﺖ ﻣﺘﻌﺎﻟﯿﻪ ‏( ﺍﺳﻔﺎﺭ ﺍﺭﺑﻌﻪ ‏) ، ﺝ 6 ، ﺑﺦ 1 ، ﺹ 434 – 433 – ﺍﻧﺘﺸﺎﺭﺍﺕ ﺍﻟﺰﻫﺮﺍﺀ .

‏[ 3 ‏] ﺍﻣﺎﻡ ﺧﻤﯿﻨﻰ، ﺭﻭﺡ ﺍﻟﻠَّﻪ، ﺷﺮﺡ ﺩﻋﺎﻯ ﺳﺤﺮ، ﺹ .143

Via : http://islamquest.net/ur

ﻓﻠﺴﻔﮧ ﮐﯽ ﻣﺬﻣﺖ ﻣﯿﮟ ﺟﻮ ﺭﻭﺍﯾﺎﺕ ﻧﻘﻞ ﮨﻮﺋﯿﮟ ﮨﯿﮟ ﺍﻥ ﺳﮯ ﮐﯿﺎ ﻣﺮﺍﺩ ﮨﮯ؟

ﺳﻮﺍﻝ : ﺟﻮ ﺭﻭﺍﯾﺘﯿﮟ ﺍﮨﻞ ﻓﻠﺴﻔﮧ ﮐﯽ ﻣﺬﻣﺖ ﻣﯿﮟ ﺧﺎﺹ ﮐﺮ ﺁﺧﺮﺍﻟﺰﻣﺎﻥ ﮐﮯ ﺩﻭﺭﮦ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﺑﯿﺎﻥ ﮨﻮﺋﯽ ﮨﯿﮟ ، ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﺍﺣﺎﺩﯾﺚ ﮐﯽ ﮐﺘﺎﺑﻮﮞ، ﺟﯿﺴﮯ ’’ ﺑﺤﺎﺭﺍﻻﻧﻮﺍﺭ ‘‘ ، ﺍﻭﺭ ’’ ﺣﺪﯾﻘۃ ﺍﻟﺸﯿﻌﮧ ‘‘ ﻣﯿﮟ ﻟﮑﮭﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ ، ﮐﻦ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﺭﻭﺍﯾﺘﻮﮞ ﮐﺎ ﻣﻘﺼﻮﺩ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ؟

.

ﺟﻮﺍﺏ : ﺩﻭ ﺗﯿﻦ ﺭﻭﺍﯾﺘﯿﮟ ﺟﻮ ﺑﻌﺾ ﮐﺘﺎﺑﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺁﺧﺮﯼ ﺍﻟﺰﻣﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﮨﻞ ﻓﻠﺴﻔﮧ ﮐﯽ ﻣﺬ ﻣﺖ ﻣﯿﮟ ﻧﻘﻞ ﮨﻮﺋﯽ ﮨﯿﮟ،ﺻﺤﯿﺢ ﮨﻮ ﻧﮯ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﺍﮨﻞ ﻓﻠﺴﻔﮧ ﮐﯽ ﻣﺬﻣﺖ ﻣﯿﮟ ﮨﯿﮟ ﻧﮧ ﺧﻮﺩﻓﻠﺴﻔﮧ ﮐﯽ ﻣﺬﻣﺖ ﻣﯿﮟ ۔ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﺑﻌﺾ ﺭﻭﺍﯾﺘﯿﮟ ﺁﺧﺮ ﺍﻟﺰﻣﺎﻥ ﮐﮯ ﻓﻘﮩﺎ ﮐﯽ ﻣﺬﻣﺖ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﻧﻘﻞ ﮨﻮﺋﯽ ﮨﯿﮟ ﻭﮦ ﻓﻘﮩﺎ ﮐﯽ ﻣﺬﻣﺖ ﻣﯿﮟ ﮨﯿﮟ ﻧﮧ ﻓﻘﮧ ﺍﺳﻼﻣﯽ ﮐﯽ ﻣﺬﻣﺖ ﻣﯿﮟ ۔ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺑﻌﺾ ﺭﻭﺍﯾﺘﯿﮟ ﺁﺧﺮ ﺍﻟﺰﻣﺎﻥ ﮐﮯ ﺍﮨﻞ ﺍﺳﻼﻡ ﺍﻭﺭ ﺍﮨﻞ ﻗﺮﺁﻥ ﮐﯽ ﻣﺬﻣﺖ ﻣﯿﮟ ﻧﻘﻞ ﮨﻮﺋﯽ ﮨﯿﮟ :

’’ ﻻﯾﺒﻘﯽٰ ﻣﻦ ﺍﻻﺳﻼﻡ ﺍﻻ ﺍﺳﻤﮧ ﻭﻻ ﻣﻦ ﺍﻟﻘﺮﺁﻥ ﺍﻻ ﺍﺳﻤﮧ ‘‘ ۱؂

ﯾﮧ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﺧﻮﺩ ﺍﺳﻼﻡ ﺍﻭﺭ ﻗﺮﺁﻥ ﮐﯽ ﻣﺬﻣﺖ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ۔

ﺍﮔﺮ ﯾﮧ ﺭﻭﺍﯾﺘﯿﮟ ﺧﺒﺮ ﻭﺍﺣﺪﻇﻨّﯽ ﮨﻮ ﺗﯿﮟ ﺗﻮ ﺧﻮﺩ ﻓﻠﺴﻔﮧ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﮨﻮ ﺗﯿﮟ ،ﺍﻭﺭ ﻓﻠﺴﻔﯽ ﻣﺴﺎﺋﻞ ‏( ﺟﯿﺴﺎ ﮐﮧ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺳﻮﺍﻝ ﮐﮯ ﺟﻮﺍﺏ ﻣﯿﮟ ﺑﯿﺎﻥ ﮨﻮﺍ ‏) ﻣﻀﻤﻮﻥ ﮐﮯ ﻟﺤﺎﻅ ﺳﮯ ﻭﮨﯽ ﻣﺴﺎﺋﻞ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﮐﺘﺎﺏ ﻭﺳﻨﺖ ﻣﯿﮟ ﺩﺭﺝ ﮨﯿﮟ ،ﯾﮧ ﻣﺬﻣﺖ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﮐﺘﺎﺏ ﻭﺳﻨﺖ ﮐﯽ ﻣﺬﻣﺖ ﮐﮯ ﻣﺎﻧﻨﺪ ﺗﮭﯽ ،ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﺍﻥ ﻣﺴﺎ ﺋﻞ ﮐﻮ ﺟﺒﺮﯼ ﻃﻮﺭ ﭘﺮﺗﺴﻠﯿﻢ ﮐﺌﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﺁﺯﺍﺩ ﺍﺳﺘﺪﻻﻝ ﻣﯿﮟ ﺷﺎﻣﻞ ﮐﯿﺎﮔﯿﺎ ﮨﮯ ۔ﺍﺻﻮﻻً ﮐﯿﺴﮯ ﻣﻤﮑﻦ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﯾﮏ ﺧﺒﺮ ﻇﻨّﯽ ﺍﯾﮏ ﻗﻄﻌﯽ ﻭ ﯾﻘﯿﻨﯽ ﺑﺮ ﮨﺎﻥ ﮐﮯ ﻣﻘﺎ ﺑﻠﮧ ﻣﯿﮟ ﺁﮐﺮ ﺍﺳﮯ ﺑﺎﻃﻞ ﮐﺮﮮ ؟ !

.

ﻣﺎﺧﺬ : ﻋﻼﻣﮧ ﻃﺒﺎ ﻃﺒﺎﺋﯽ، ﺍﺳﻼﻡ ﺍﻭﺭ ﺁﺝ ﮐﺎ ﺍﻧﺴﺎﻥ

امام حسین(ع) کے کٹے ہوئے سر کا نیزے پر قرآن پڑھنا 

سوال:

کیا امام حسین(ع) کے کٹے ہوئے سر کا نیزے پر قرآن پڑھنا یہ معتبر کتب میں نقل ہوا ہے یا نہیں؟

جواب:

امام حسین(ع) کے سر کا نوک نیزہ پر قرآن پڑھنا یہ تاریخ کربلاء میں ایسی واضح بات ہے کہ جس کو علماء شیعہ اور علماء سنی سب نے صحیح سند کے ساتھ نقل کیا ہے۔

کتب شیعہ میں یہ روایت:

شیخ مفید(رح) نے اپنی معتبر کتاب الاشاد میں نقل کیا ہے کہ:

عن زيد بن أرقم أنه قال: مر به علي وهو علی رمح وأنا في غرفة، فلما حاذاني سمعته يقرأ: (أم حسبت أن أصحاب الكهف والرقيم كانوا من آياتنا عجبا) فقف – والله – شعري وناديت: رأسك والله – يا ابن رسول الله – أعجب وأعجب.

زید ابن ارقم کہتا ہے کہ: میں ایک دن کمرے میں بیٹھا ہوا تھا کہ امام حسین(ع) کے بریدہ سر کو کہ جو نیزے پر تھا میرے پاس سے گزارا گیا۔ میں نے سنا کہ سر سورہ کہف کی آیت کی تلاوت کر رہا تھا ” کہ کیا تم نے خیال کیا ہے کہ اصحاب کہف اور رقیم یہ ہماری عجیب آیات میں سے تھیں؟ خدا کی قسم جب میں نے اس آیت کو اس سر سے  سنا تو میرے بدن کے بال کھڑے ہو گئے اور میں نے کہا اے فرزند رسول خدا، خدا کی قسم آپ کے سر کا اس حالت میں قرآن پڑھنا یہ اصحاب کہف سے بھی عجیب تر ہے۔

الإرشاد – شيخ مفيد – ج 2 – ص 117 – 118

مرحوم محمد بن سليمان الكوفی لکھتا ہے کہ:

[حدثنا] أبو أحمد قال: سمعت محمد بن مهدي يحدث عن عبد الله بن داهر الرازي عن أبيه عن الأعمش: عن المنهال بن عمرو قال: رأيت رأس الحسين بن علي علي الرمح وهو يتلو هذه الآية: * (أم حسبت أن أصحاب الكهف والرقيم كانوا من آياتنا عجبا) * فقال رجل من عرض الناس: رأسك يا ابن رسول الله أعجب؟

اس کا ترجمہ اوپر گزر چکا ہے…….

مناقب الإمام أمير المؤمنين (ع) – محمد بن سليمان الكوفی – ج 2 – ص 267.

اسی طرح ابن حمزه طوسی نے لکھا ہے کہ:

عن المنهال بن عمرو، قال: أنا والله رأيت رأس الحسين صلوات الله عليه علي قناة يقرأ القرآن بلسان ذلق ذرب يقرأ سورة الكهف حتي بلغ: * (أم حسبت أن أصحاب الكهف والرقيم كانوا من آياتنا عجبا) * فقال رجل: ورأسك – والله – أعجب يا ابن رسول الله من العجب۔

اس کا ترجمہ اوپر گزر چکا ہے…….

وعنه، قال: أدخل رأس الحسين صلوات الله عليه دمشق علي قناة، فمر برجل يقرأ سورة الكهف وقد بلغ هذه الآية * (أم حسبت أن أصحاب الكهف والرقيم كانوا من آياتنا عجبا) * فأنطق الله تعالي الرأس، فقال: أمري أعجب من أمر أصحاب الكهف والرقيم.

……. جب سر نے سورہ کہف کی آیت کو پڑھا تو فوری کہا کہ: اصحاب کہف سے زیادہ عجیب میرا قتل ہونا اور میرے سر کو  نیزے پر اٹھانا ہے۔

الثاقب في المناقب – ابن حمزة الطوسی – ص 333.

قطب الدين راوندی نے بھی لکھا ہے کہ:

عن المنهال بن عمرو قال: أنا والله رأيت رأس الحسين عليه السلام حين حمل وأنا بدمشق، وبين يديه رجل يقرأ الكهف، حتي بلغ قوله: (أم حسبت أن أصحاب الكهف والرقيم كانوا من آياتنا عجبا)، فأنطق الله الرأس بلسان ذرب ذلق فقال: أعجب من أصحاب الكهف قتلي وحملی۔

منھال بن عمرو کہتا ہے کہ: خدا کی قسم میں نے  حسین ابن علی کے سر کو نیزے پر دیکھا ہے اور میں اس وقت دمشق میں تھا۔ وہ سر آیت قرآن کو پڑھ رہا تھا….. آیت کے فوری بعد سر نے واضح اور بلیغ زبان میں کہا کہ اصحاب کہف سے زیادہ عجیب میرا قتل ہونا اور میرے سر کو  نیزے پر اٹھانا ہے۔

الخرائج والجرائح – قطب الدين الراوندي – ج 2 – ص 577.

ابن شهر آشوب لکھتا ہے کہ:

روي أبو مخنف عن الشعبي انه صلب رأس الحسين بالصيارف في الكوفة فتنحنح الرأس وقرأ سورة الكهف إلي قوله: (انهم فتية آمنوا بربهم وزدناهم هدي فلم يزدهم إلا ضلالا). وفي أثر انهم لما صلبوا رأسه علي الشجرة سمع منه: (وسيعلم الذين ظلموا أي منقلب ينقلبون). وسمع أيضا صوته بدمشق يقول: لا قوة إلا بالله. وسمع أيضا يقرأ: (ان أصحاب الكهف والرقيم كانوا من آياتنا عجبا)، فقال زيد بن أرقم: أمرك أعجب يا ابن رسول الله.

اس کا ترجمہ اوپر گزر چکا ہے…….

مناقب آل أبي طالب – ابن شهر آشوب – ج 3 – ص 218.

علی بن يونس عاملی نے لکھا ہے کہ:

قرأ رجل عند رأسه بدمشق (أم حسبت أن أصحاب الكهف والرقيم كانوا من آياتنا عجبا) فأنطق الله الرأس بلسان عربي: أعجب من أهل الكهف قتلي وحملي.

اس کا ترجمہ اوپر گزر چکا ہے……

الصراط المستقيم – علي بن يونس العاملي – ج 2 – ص 179

سيد ہاشم البحرانی لکھتا ہے کہ:

فوقفوا بباب بني خزيمة ساعة من النهار، والرأس علي قناة طويلة، فتلا سورة الكهف، إلي أن بلغ في قراءته إلي قوله تعالي: * (أم حسبت أن أصحاب الكهف والرقيم كانوا من آياتنا عجبا) *. قال سهل: والله إن قراءته أعجب الأشياء.

……. سھل کہتا ہے کہ: خدا کی قسم سر کا نیزے پر قرآن پڑھنا یہ سب سے زیادہ عجیب شئ ہے۔

مدينة المعاجز – السيد هاشم البحرانی – ج 4 – ص 123

علامہ مجلسی (رح) نے كتاب شريف بحار الأنوار میں ایک باب کو اسی مطلب کے لیے خاص کیا ہے:

بحار الأنوار – علامة مجلسی – ج 45 – ص 121

کتب اہل سنت میں یہ روایت:

ابن عساكر كتاب تاريخ مدينہ دمشق میں لکھتا ہے کہ:

نا الأعمش نا سلمة بن كهيل قال رأيت رأس الحسين بن علي رضي الله عنهما علي القناة وهو يقول ” فسيكفيكهم الله وهو السميع العليم.

سلمہ بن کھیل کہتا ہے کہ: میں نے حسین ابن علی(ع) کے سر کو نیزے پر دیکھا ہے وہ یہ آیت پڑھ رہا تھا…….

تاريخ مدينة دمشق – ابن عساكر – ج 22 – ص 117 – 118.

محقق كتاب کے حاشیے میں لکھتا ہے کہ:

وزيد بعدها في م: قال أبو الحسن العسقلاني: فقلت لعلي بن هارون انك سمعته من محمد بن أحمد المصري، قال: الله اني سمعته منه، قال الأنصاري فقلت لمحمد بن أحمد: الله انك سمعته من صالح؟ قال: الله إني سمعته منه، قال جرير بن محمد: فقلت لصالح: الله انك سمعته من معاذ بن أسد؟ قال: الله اني سمعته منه، قال معاذ بن أسد: فقلت للفضل: الله انك سمته من الأعمش؟ فقال: الله اني سمعته منه، قال الأعمش: فقلت لسلمة بن كهيل: الله انك سمعته منه؟ قال: الله اني سمعته منه بباب الفراديس بدمشق؟ مثل لي ولا شبه لي، وهو يقول: (فسيكفيكهم الله وهو السميع العليم).

مجھے اس بات میں کسی قسم کا شبہ و شک نہیں ہے کہ میں نے نیزے پر حسین ابن علی(ع) کے سر کو دیکھا تھا۔

 اسی طرح ابن عساكر نے اسی کتاب میں ایک دوسری جگہ لکھا ہے کہ:

عن المنهال بن عمرو قال أنا والله رأيت رأس الحسين بن علي حين حمل وأنا بدمشق وبين يدي الرأس رجل يقرأ سورة الكهف حتي بلغ قوله تعالي ” أم حسبت أن أصحاب الكهف والرقيم كانوا من آياتنا عجبا ” قال فأنطق الله الرأس بلسان ذرب فقال أعجب من أصحاب الكهف قتلي وحمل.

منھال بن عمرو کہتا ہے کہ: خدا کی قسم میں نے  حسین ابن علی کے سر کو نیزے پر دیکھا ہے اور میں اس وقت دمشق میں تھا۔ وہ سر آیت قرآن کو پڑھ رہا تھا….. آیت کے فوری بعد سر نے واضح اور بلیغ زبان میں کہا کہ اصحاب کہف سے زیادہ عجیب میرا قتل ہونا اور میرے سر کو  نیزے پر اٹھانا ہے۔

تاريخ مدينة دمشق – ابن عساكر – ج 60 – ص 369 – 370.

اسی مطلب کو دوسرے علماء اہل سنت نے بھی اپنی کتب میں ذکر کیا ہے:

مختصر تاريخ دمشق، بن منظور المصري ج 3 ص 362

الوافي بالوفيات، صلاح الدين الصفدي  ج 15 ص 201

الخصائص الكبرى، جلال الدين السيوطی ج 2 ص 216

شرح الصدور بشرح حال الموتى والقبور، جلال الدين السيوطی   ج 1   ص 210

سبل الهدى والرشاد الصالحي الشامی ج 11 ص 76

فيض القدير شرح الجامع الصغير المناوي ج 1 ص 205

نتیجہ:

پس شیعہ و سنی کتب میں اتنے معتبر دلائل ذکر ہونے کے بعد امام حسین(ع) کے سر کے نیزے پر قرآن پڑھنے میں کسی قسم کا شک باقی نہیں رہ جاتا۔

التماس دعا

Via :http://www.valiasr-aj.com/urdu/shownews.php?idnews=366

Tawakkul 

Tawakkul 

Tawakkul ka maf’hoom ye hai ki Koi shakhs apne aap ko kisi kaam se aajiz samajhte hue use kisi aur shakhs par mawqoof kare, is liye lafz “wakalat” aur “tawkeel” bhi isi maa’na par mushtamil hai. 
Jauhri ne Sihah ul lughat me iski tareef yu ki hai :- tawakkul izhare ajz aur dosro par aitmaad ka naam hai. ye bhi mumkin hai ki tawakkul bunyadi taur par ajz ke maa’na me ho aur kaam ko dosro par mawqoof karna ajz ka laazma ho, is liye Arab log lafz wakal(وَکَل) aur lafz (وُکَلَہ) ko aise fard Ke liye istemal karte hain jo kisi kaam se aajiz ho aur use dosro par maukool kare. 
Ek Sahibe Irfan kehte hain :- tawakkul se muraad hai tamaam umoor ko unke maalik ke supurd karna aur uski wakalat par aitmaad karna. 
Kuch Ulema kehte hai’n : Allah par tawakkul se muraad ye hai ki banda un tamaam umoor me Allah par mukammal aitmaad kare Jin ki wo bando se ummeed rakhta hai. 
Ek aarif ka kehna hai : tawakkul badan ko uboodiyat Ke liye waqf karne aur dil ko allah se wabasta karne se ibarat hai. 

A’daab e Shukr e ilahi

A’daab e Shukr e ilahi

Imam Sadiq (as) ne farmaya : Khuda k shukr ka Haq ada karne ki zimmedariyo me se ek ye hai ki too us shakhs ka shukr ada Kar jis k hatho se ye ne’mat jaari hui ho.
(Wasail us Shia, jild 16)

.

Makhlooq ka shukriya ada karna agarche ek qat’ii zimmedari hai, lekin unhe Allah ne hi in wasael se nawaza hai Jin k zariye wo Allah ki nemaat dosro tak pahunchate hain lihaaza ye sazawaar nahi ki tum sirf un ka shukriya ada karke apne khaliq aur raziq e haqeeqi ko bhula do, kyunki ye mun’am e haqeeqi k Haq me Ain kufraan ne’mat aur ahsaan faramoshi hai.

.

Rasool Allah(saw) ne farmaya : qayamat k din bande ko laakar Allah(jj) k saamne khadha kiya jaega. Phir Allah use jehennum ki taraf le jane ka hukm dega.

Wo arz karega : Ae mere rabb! Kya tu mujhe aag me daalne ka hukm dega jabki maine Quran padha hai?

Allah farmaega : Ae mere Bande! Batahqeeq maine tujhe apni ne’mato se nawaza lekin tu ne Meri nemat ka shukr ada nahi kiya.

Wo arz karega : Ae mere rabb! Tu ne mujhe fala’n ne’mat di aur maine fala’n tareeqe se tera shukr ada kiya, aur tu ne mujhe wo ne’mat di aur maine us tareeqe se tera shukr ada kiya. Is tarah wo ne’mato aur shukr ki ta’daad ko ginta jaega.

Pas Allah farmaega : Ae mere bande! Tu ne durust kaha, lekin tu ne uska shukr ada nahi kiya jiske zariye maine tujhe apni ne’mat se nawaza Batahqeeq maine apne ta’iin pe ahad kiya hai ki mai apni di hui ne’mat par kisi bande ka shukr qubool nahi karunga jab tak wo mere us bande ka shukr ada na Kare jis ne wo ne’mat us tak pahunchai.

(Wasail us Shia, jild 16)

فلسفہ قربانی قسط و عدل کے زاویہ سے 

ﮐﯿﺎ ﺍﭘﻨﺎ ﺍﺧﻼﺹ ﺛﺎﺑﺖ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮐﺴﯽ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻟﯿﻨﺎ ﺩﺭﺳﺖ ﮨﮯ؟
جواب : 

اگر میرے عزیز آپ کا اشارہ آنے والے دن کی قربانی ہے تو پہلی بات یہ کہ ہر  احکام الہی کے پیچھے ایک مقصد و فلسفہ ہے، صرف جانور کی قربانی نہیں ہے یہ بلکہ اپنے مال کی قربانی ہے جس کے ذریعہ ایک حلال جانور (گائے، بکرا یا بھیڑ، اونٹ) خریدا جاتا ہے اور ذبح کیا جاتا ہے اور جس سے فقط اپنے کو سیر نہیں کیا جانا بلکہ ان فقراء کی شکم پری کی جائے جو ان نعمات و لذات سے تنگ دستی و فقیری کی وجہ سے استفادہ نہیں کر سکتے(حالانکہ ایسا بہت کم ہی رائج ہے کیونکہ اکثر لوگ اپنوں تک ہی تقسیم کرکے اپنی ذمہ داری کو پورا سمجھ لیتے ہیں). 

ایک مخصوص دن یہ احکام جو حاجیوں کے لیے واجب اور غیر حاجی عوام کے لئے مستحبات میں سے رکھا گیا، اس کی وجہ یہ ہو سکتی ہے کہ کوئی فقیر و نادار اس نعمت سے محروم نہ رہے اور ایک وجہ صاحب استطاعت کو یاد دلانا کہ فقط تمہارا خود کا پیٹ بھرنا ہی کافی نہیں بلکہ خدا کی راہ میں دوسرے افراد معاشرہ کا بھی خیال رکھنا ہے، قسط کو عدل کی طرف لے جانا ہے، اور یہ ایک بہترین یاد آوری ہے عظیم قربانی کی اور اس کے پیچھے فلسفہ کی، انسان اس پورا فلسفہ حیات لے سکتا ہے کہ صرف خود کے لیے نہیں جینا بلکہ دوسرے افراد معاشرہ جن تک نعمات الہی نہیں پہنچ رہی ان تک نعمات الہی کو پہنچانا، اور یہی وہ فریضہ ہے جو انسان کے کندھوں پہ ہے عادلانہ تقسیم کرے ان نعمات کی جو اسے اللہ نے عنایت فرمائیں ہیں جس سے کہ ایک بہترین مثالی معاشرہ تشکیل پا سکے جو عدل سے پر ہو جہاں مہروم و تنگدست نہ ہو. 

  اپنے مال و دولت، قیمتی وقت، و دوسرے وسائل سے مجبور و نادار مستضعفین کی ہر طرح کی امداد فقط خوشنودی الہی کے لئے حقیقی قربانی ہے اور یوم عید الاضحٰی اسی جانب ہر سال امت مسلمہ کو غور و فکر کا موقع دیتی ہے. 
خدا، ہمیں حقیقی معنوں میں اپنے عزیز تر چیزوں کو  اپنی راہ میں قربان کرنے کی توفیق عطا فرمائے جس سے کہ معاشرے میں عدل کا نفاذ ہو سکے.. 
آمین
تحریر از قلم عادل عباس