ﻓﻠﺴﻔﮧ ﮐﯽ ﻣﺬﻣﺖ ﻣﯿﮟ ﺟﻮ ﺭﻭﺍﯾﺎﺕ ﻧﻘﻞ ﮨﻮﺋﯿﮟ ﮨﯿﮟ ﺍﻥ ﺳﮯ ﮐﯿﺎ ﻣﺮﺍﺩ ﮨﮯ؟

ﺳﻮﺍﻝ : ﺟﻮ ﺭﻭﺍﯾﺘﯿﮟ ﺍﮨﻞ ﻓﻠﺴﻔﮧ ﮐﯽ ﻣﺬﻣﺖ ﻣﯿﮟ ﺧﺎﺹ ﮐﺮ ﺁﺧﺮﺍﻟﺰﻣﺎﻥ ﮐﮯ ﺩﻭﺭﮦ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﺑﯿﺎﻥ ﮨﻮﺋﯽ ﮨﯿﮟ ، ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﺍﺣﺎﺩﯾﺚ ﮐﯽ ﮐﺘﺎﺑﻮﮞ، ﺟﯿﺴﮯ ’’ ﺑﺤﺎﺭﺍﻻﻧﻮﺍﺭ ‘‘ ، ﺍﻭﺭ ’’ ﺣﺪﯾﻘۃ ﺍﻟﺸﯿﻌﮧ ‘‘ ﻣﯿﮟ ﻟﮑﮭﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ ، ﮐﻦ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﺭﻭﺍﯾﺘﻮﮞ ﮐﺎ ﻣﻘﺼﻮﺩ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ؟

.

ﺟﻮﺍﺏ : ﺩﻭ ﺗﯿﻦ ﺭﻭﺍﯾﺘﯿﮟ ﺟﻮ ﺑﻌﺾ ﮐﺘﺎﺑﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺁﺧﺮﯼ ﺍﻟﺰﻣﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﮨﻞ ﻓﻠﺴﻔﮧ ﮐﯽ ﻣﺬ ﻣﺖ ﻣﯿﮟ ﻧﻘﻞ ﮨﻮﺋﯽ ﮨﯿﮟ،ﺻﺤﯿﺢ ﮨﻮ ﻧﮯ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﺍﮨﻞ ﻓﻠﺴﻔﮧ ﮐﯽ ﻣﺬﻣﺖ ﻣﯿﮟ ﮨﯿﮟ ﻧﮧ ﺧﻮﺩﻓﻠﺴﻔﮧ ﮐﯽ ﻣﺬﻣﺖ ﻣﯿﮟ ۔ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﺑﻌﺾ ﺭﻭﺍﯾﺘﯿﮟ ﺁﺧﺮ ﺍﻟﺰﻣﺎﻥ ﮐﮯ ﻓﻘﮩﺎ ﮐﯽ ﻣﺬﻣﺖ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﻧﻘﻞ ﮨﻮﺋﯽ ﮨﯿﮟ ﻭﮦ ﻓﻘﮩﺎ ﮐﯽ ﻣﺬﻣﺖ ﻣﯿﮟ ﮨﯿﮟ ﻧﮧ ﻓﻘﮧ ﺍﺳﻼﻣﯽ ﮐﯽ ﻣﺬﻣﺖ ﻣﯿﮟ ۔ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺑﻌﺾ ﺭﻭﺍﯾﺘﯿﮟ ﺁﺧﺮ ﺍﻟﺰﻣﺎﻥ ﮐﮯ ﺍﮨﻞ ﺍﺳﻼﻡ ﺍﻭﺭ ﺍﮨﻞ ﻗﺮﺁﻥ ﮐﯽ ﻣﺬﻣﺖ ﻣﯿﮟ ﻧﻘﻞ ﮨﻮﺋﯽ ﮨﯿﮟ :

’’ ﻻﯾﺒﻘﯽٰ ﻣﻦ ﺍﻻﺳﻼﻡ ﺍﻻ ﺍﺳﻤﮧ ﻭﻻ ﻣﻦ ﺍﻟﻘﺮﺁﻥ ﺍﻻ ﺍﺳﻤﮧ ‘‘ ۱؂

ﯾﮧ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﺧﻮﺩ ﺍﺳﻼﻡ ﺍﻭﺭ ﻗﺮﺁﻥ ﮐﯽ ﻣﺬﻣﺖ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ۔

ﺍﮔﺮ ﯾﮧ ﺭﻭﺍﯾﺘﯿﮟ ﺧﺒﺮ ﻭﺍﺣﺪﻇﻨّﯽ ﮨﻮ ﺗﯿﮟ ﺗﻮ ﺧﻮﺩ ﻓﻠﺴﻔﮧ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﮨﻮ ﺗﯿﮟ ،ﺍﻭﺭ ﻓﻠﺴﻔﯽ ﻣﺴﺎﺋﻞ ‏( ﺟﯿﺴﺎ ﮐﮧ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺳﻮﺍﻝ ﮐﮯ ﺟﻮﺍﺏ ﻣﯿﮟ ﺑﯿﺎﻥ ﮨﻮﺍ ‏) ﻣﻀﻤﻮﻥ ﮐﮯ ﻟﺤﺎﻅ ﺳﮯ ﻭﮨﯽ ﻣﺴﺎﺋﻞ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﮐﺘﺎﺏ ﻭﺳﻨﺖ ﻣﯿﮟ ﺩﺭﺝ ﮨﯿﮟ ،ﯾﮧ ﻣﺬﻣﺖ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﮐﺘﺎﺏ ﻭﺳﻨﺖ ﮐﯽ ﻣﺬﻣﺖ ﮐﮯ ﻣﺎﻧﻨﺪ ﺗﮭﯽ ،ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﺍﻥ ﻣﺴﺎ ﺋﻞ ﮐﻮ ﺟﺒﺮﯼ ﻃﻮﺭ ﭘﺮﺗﺴﻠﯿﻢ ﮐﺌﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﺁﺯﺍﺩ ﺍﺳﺘﺪﻻﻝ ﻣﯿﮟ ﺷﺎﻣﻞ ﮐﯿﺎﮔﯿﺎ ﮨﮯ ۔ﺍﺻﻮﻻً ﮐﯿﺴﮯ ﻣﻤﮑﻦ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﯾﮏ ﺧﺒﺮ ﻇﻨّﯽ ﺍﯾﮏ ﻗﻄﻌﯽ ﻭ ﯾﻘﯿﻨﯽ ﺑﺮ ﮨﺎﻥ ﮐﮯ ﻣﻘﺎ ﺑﻠﮧ ﻣﯿﮟ ﺁﮐﺮ ﺍﺳﮯ ﺑﺎﻃﻞ ﮐﺮﮮ ؟ !

.

ﻣﺎﺧﺬ : ﻋﻼﻣﮧ ﻃﺒﺎ ﻃﺒﺎﺋﯽ، ﺍﺳﻼﻡ ﺍﻭﺭ ﺁﺝ ﮐﺎ ﺍﻧﺴﺎﻥ

Advertisements

امام حسین(ع) کے کٹے ہوئے سر کا نیزے پر قرآن پڑھنا 

سوال:

کیا امام حسین(ع) کے کٹے ہوئے سر کا نیزے پر قرآن پڑھنا یہ معتبر کتب میں نقل ہوا ہے یا نہیں؟

جواب:

امام حسین(ع) کے سر کا نوک نیزہ پر قرآن پڑھنا یہ تاریخ کربلاء میں ایسی واضح بات ہے کہ جس کو علماء شیعہ اور علماء سنی سب نے صحیح سند کے ساتھ نقل کیا ہے۔

کتب شیعہ میں یہ روایت:

شیخ مفید(رح) نے اپنی معتبر کتاب الاشاد میں نقل کیا ہے کہ:

عن زيد بن أرقم أنه قال: مر به علي وهو علی رمح وأنا في غرفة، فلما حاذاني سمعته يقرأ: (أم حسبت أن أصحاب الكهف والرقيم كانوا من آياتنا عجبا) فقف – والله – شعري وناديت: رأسك والله – يا ابن رسول الله – أعجب وأعجب.

زید ابن ارقم کہتا ہے کہ: میں ایک دن کمرے میں بیٹھا ہوا تھا کہ امام حسین(ع) کے بریدہ سر کو کہ جو نیزے پر تھا میرے پاس سے گزارا گیا۔ میں نے سنا کہ سر سورہ کہف کی آیت کی تلاوت کر رہا تھا ” کہ کیا تم نے خیال کیا ہے کہ اصحاب کہف اور رقیم یہ ہماری عجیب آیات میں سے تھیں؟ خدا کی قسم جب میں نے اس آیت کو اس سر سے  سنا تو میرے بدن کے بال کھڑے ہو گئے اور میں نے کہا اے فرزند رسول خدا، خدا کی قسم آپ کے سر کا اس حالت میں قرآن پڑھنا یہ اصحاب کہف سے بھی عجیب تر ہے۔

الإرشاد – شيخ مفيد – ج 2 – ص 117 – 118

مرحوم محمد بن سليمان الكوفی لکھتا ہے کہ:

[حدثنا] أبو أحمد قال: سمعت محمد بن مهدي يحدث عن عبد الله بن داهر الرازي عن أبيه عن الأعمش: عن المنهال بن عمرو قال: رأيت رأس الحسين بن علي علي الرمح وهو يتلو هذه الآية: * (أم حسبت أن أصحاب الكهف والرقيم كانوا من آياتنا عجبا) * فقال رجل من عرض الناس: رأسك يا ابن رسول الله أعجب؟

اس کا ترجمہ اوپر گزر چکا ہے…….

مناقب الإمام أمير المؤمنين (ع) – محمد بن سليمان الكوفی – ج 2 – ص 267.

اسی طرح ابن حمزه طوسی نے لکھا ہے کہ:

عن المنهال بن عمرو، قال: أنا والله رأيت رأس الحسين صلوات الله عليه علي قناة يقرأ القرآن بلسان ذلق ذرب يقرأ سورة الكهف حتي بلغ: * (أم حسبت أن أصحاب الكهف والرقيم كانوا من آياتنا عجبا) * فقال رجل: ورأسك – والله – أعجب يا ابن رسول الله من العجب۔

اس کا ترجمہ اوپر گزر چکا ہے…….

وعنه، قال: أدخل رأس الحسين صلوات الله عليه دمشق علي قناة، فمر برجل يقرأ سورة الكهف وقد بلغ هذه الآية * (أم حسبت أن أصحاب الكهف والرقيم كانوا من آياتنا عجبا) * فأنطق الله تعالي الرأس، فقال: أمري أعجب من أمر أصحاب الكهف والرقيم.

……. جب سر نے سورہ کہف کی آیت کو پڑھا تو فوری کہا کہ: اصحاب کہف سے زیادہ عجیب میرا قتل ہونا اور میرے سر کو  نیزے پر اٹھانا ہے۔

الثاقب في المناقب – ابن حمزة الطوسی – ص 333.

قطب الدين راوندی نے بھی لکھا ہے کہ:

عن المنهال بن عمرو قال: أنا والله رأيت رأس الحسين عليه السلام حين حمل وأنا بدمشق، وبين يديه رجل يقرأ الكهف، حتي بلغ قوله: (أم حسبت أن أصحاب الكهف والرقيم كانوا من آياتنا عجبا)، فأنطق الله الرأس بلسان ذرب ذلق فقال: أعجب من أصحاب الكهف قتلي وحملی۔

منھال بن عمرو کہتا ہے کہ: خدا کی قسم میں نے  حسین ابن علی کے سر کو نیزے پر دیکھا ہے اور میں اس وقت دمشق میں تھا۔ وہ سر آیت قرآن کو پڑھ رہا تھا….. آیت کے فوری بعد سر نے واضح اور بلیغ زبان میں کہا کہ اصحاب کہف سے زیادہ عجیب میرا قتل ہونا اور میرے سر کو  نیزے پر اٹھانا ہے۔

الخرائج والجرائح – قطب الدين الراوندي – ج 2 – ص 577.

ابن شهر آشوب لکھتا ہے کہ:

روي أبو مخنف عن الشعبي انه صلب رأس الحسين بالصيارف في الكوفة فتنحنح الرأس وقرأ سورة الكهف إلي قوله: (انهم فتية آمنوا بربهم وزدناهم هدي فلم يزدهم إلا ضلالا). وفي أثر انهم لما صلبوا رأسه علي الشجرة سمع منه: (وسيعلم الذين ظلموا أي منقلب ينقلبون). وسمع أيضا صوته بدمشق يقول: لا قوة إلا بالله. وسمع أيضا يقرأ: (ان أصحاب الكهف والرقيم كانوا من آياتنا عجبا)، فقال زيد بن أرقم: أمرك أعجب يا ابن رسول الله.

اس کا ترجمہ اوپر گزر چکا ہے…….

مناقب آل أبي طالب – ابن شهر آشوب – ج 3 – ص 218.

علی بن يونس عاملی نے لکھا ہے کہ:

قرأ رجل عند رأسه بدمشق (أم حسبت أن أصحاب الكهف والرقيم كانوا من آياتنا عجبا) فأنطق الله الرأس بلسان عربي: أعجب من أهل الكهف قتلي وحملي.

اس کا ترجمہ اوپر گزر چکا ہے……

الصراط المستقيم – علي بن يونس العاملي – ج 2 – ص 179

سيد ہاشم البحرانی لکھتا ہے کہ:

فوقفوا بباب بني خزيمة ساعة من النهار، والرأس علي قناة طويلة، فتلا سورة الكهف، إلي أن بلغ في قراءته إلي قوله تعالي: * (أم حسبت أن أصحاب الكهف والرقيم كانوا من آياتنا عجبا) *. قال سهل: والله إن قراءته أعجب الأشياء.

……. سھل کہتا ہے کہ: خدا کی قسم سر کا نیزے پر قرآن پڑھنا یہ سب سے زیادہ عجیب شئ ہے۔

مدينة المعاجز – السيد هاشم البحرانی – ج 4 – ص 123

علامہ مجلسی (رح) نے كتاب شريف بحار الأنوار میں ایک باب کو اسی مطلب کے لیے خاص کیا ہے:

بحار الأنوار – علامة مجلسی – ج 45 – ص 121

کتب اہل سنت میں یہ روایت:

ابن عساكر كتاب تاريخ مدينہ دمشق میں لکھتا ہے کہ:

نا الأعمش نا سلمة بن كهيل قال رأيت رأس الحسين بن علي رضي الله عنهما علي القناة وهو يقول ” فسيكفيكهم الله وهو السميع العليم.

سلمہ بن کھیل کہتا ہے کہ: میں نے حسین ابن علی(ع) کے سر کو نیزے پر دیکھا ہے وہ یہ آیت پڑھ رہا تھا…….

تاريخ مدينة دمشق – ابن عساكر – ج 22 – ص 117 – 118.

محقق كتاب کے حاشیے میں لکھتا ہے کہ:

وزيد بعدها في م: قال أبو الحسن العسقلاني: فقلت لعلي بن هارون انك سمعته من محمد بن أحمد المصري، قال: الله اني سمعته منه، قال الأنصاري فقلت لمحمد بن أحمد: الله انك سمعته من صالح؟ قال: الله إني سمعته منه، قال جرير بن محمد: فقلت لصالح: الله انك سمعته من معاذ بن أسد؟ قال: الله اني سمعته منه، قال معاذ بن أسد: فقلت للفضل: الله انك سمته من الأعمش؟ فقال: الله اني سمعته منه، قال الأعمش: فقلت لسلمة بن كهيل: الله انك سمعته منه؟ قال: الله اني سمعته منه بباب الفراديس بدمشق؟ مثل لي ولا شبه لي، وهو يقول: (فسيكفيكهم الله وهو السميع العليم).

مجھے اس بات میں کسی قسم کا شبہ و شک نہیں ہے کہ میں نے نیزے پر حسین ابن علی(ع) کے سر کو دیکھا تھا۔

 اسی طرح ابن عساكر نے اسی کتاب میں ایک دوسری جگہ لکھا ہے کہ:

عن المنهال بن عمرو قال أنا والله رأيت رأس الحسين بن علي حين حمل وأنا بدمشق وبين يدي الرأس رجل يقرأ سورة الكهف حتي بلغ قوله تعالي ” أم حسبت أن أصحاب الكهف والرقيم كانوا من آياتنا عجبا ” قال فأنطق الله الرأس بلسان ذرب فقال أعجب من أصحاب الكهف قتلي وحمل.

منھال بن عمرو کہتا ہے کہ: خدا کی قسم میں نے  حسین ابن علی کے سر کو نیزے پر دیکھا ہے اور میں اس وقت دمشق میں تھا۔ وہ سر آیت قرآن کو پڑھ رہا تھا….. آیت کے فوری بعد سر نے واضح اور بلیغ زبان میں کہا کہ اصحاب کہف سے زیادہ عجیب میرا قتل ہونا اور میرے سر کو  نیزے پر اٹھانا ہے۔

تاريخ مدينة دمشق – ابن عساكر – ج 60 – ص 369 – 370.

اسی مطلب کو دوسرے علماء اہل سنت نے بھی اپنی کتب میں ذکر کیا ہے:

مختصر تاريخ دمشق، بن منظور المصري ج 3 ص 362

الوافي بالوفيات، صلاح الدين الصفدي  ج 15 ص 201

الخصائص الكبرى، جلال الدين السيوطی ج 2 ص 216

شرح الصدور بشرح حال الموتى والقبور، جلال الدين السيوطی   ج 1   ص 210

سبل الهدى والرشاد الصالحي الشامی ج 11 ص 76

فيض القدير شرح الجامع الصغير المناوي ج 1 ص 205

نتیجہ:

پس شیعہ و سنی کتب میں اتنے معتبر دلائل ذکر ہونے کے بعد امام حسین(ع) کے سر کے نیزے پر قرآن پڑھنے میں کسی قسم کا شک باقی نہیں رہ جاتا۔

التماس دعا

Via :http://www.valiasr-aj.com/urdu/shownews.php?idnews=366

Tawakkul 

Tawakkul 

Tawakkul ka maf’hoom ye hai ki Koi shakhs apne aap ko kisi kaam se aajiz samajhte hue use kisi aur shakhs par mawqoof kare, is liye lafz “wakalat” aur “tawkeel” bhi isi maa’na par mushtamil hai. 
Jauhri ne Sihah ul lughat me iski tareef yu ki hai :- tawakkul izhare ajz aur dosro par aitmaad ka naam hai. ye bhi mumkin hai ki tawakkul bunyadi taur par ajz ke maa’na me ho aur kaam ko dosro par mawqoof karna ajz ka laazma ho, is liye Arab log lafz wakal(وَکَل) aur lafz (وُکَلَہ) ko aise fard Ke liye istemal karte hain jo kisi kaam se aajiz ho aur use dosro par maukool kare. 
Ek Sahibe Irfan kehte hain :- tawakkul se muraad hai tamaam umoor ko unke maalik ke supurd karna aur uski wakalat par aitmaad karna. 
Kuch Ulema kehte hai’n : Allah par tawakkul se muraad ye hai ki banda un tamaam umoor me Allah par mukammal aitmaad kare Jin ki wo bando se ummeed rakhta hai. 
Ek aarif ka kehna hai : tawakkul badan ko uboodiyat Ke liye waqf karne aur dil ko allah se wabasta karne se ibarat hai. 

A’daab e Shukr e ilahi

A’daab e Shukr e ilahi

Imam Sadiq (as) ne farmaya : Khuda k shukr ka Haq ada karne ki zimmedariyo me se ek ye hai ki too us shakhs ka shukr ada Kar jis k hatho se ye ne’mat jaari hui ho.
(Wasail us Shia, jild 16)

.

Makhlooq ka shukriya ada karna agarche ek qat’ii zimmedari hai, lekin unhe Allah ne hi in wasael se nawaza hai Jin k zariye wo Allah ki nemaat dosro tak pahunchate hain lihaaza ye sazawaar nahi ki tum sirf un ka shukriya ada karke apne khaliq aur raziq e haqeeqi ko bhula do, kyunki ye mun’am e haqeeqi k Haq me Ain kufraan ne’mat aur ahsaan faramoshi hai.

.

Rasool Allah(saw) ne farmaya : qayamat k din bande ko laakar Allah(jj) k saamne khadha kiya jaega. Phir Allah use jehennum ki taraf le jane ka hukm dega.

Wo arz karega : Ae mere rabb! Kya tu mujhe aag me daalne ka hukm dega jabki maine Quran padha hai?

Allah farmaega : Ae mere Bande! Batahqeeq maine tujhe apni ne’mato se nawaza lekin tu ne Meri nemat ka shukr ada nahi kiya.

Wo arz karega : Ae mere rabb! Tu ne mujhe fala’n ne’mat di aur maine fala’n tareeqe se tera shukr ada kiya, aur tu ne mujhe wo ne’mat di aur maine us tareeqe se tera shukr ada kiya. Is tarah wo ne’mato aur shukr ki ta’daad ko ginta jaega.

Pas Allah farmaega : Ae mere bande! Tu ne durust kaha, lekin tu ne uska shukr ada nahi kiya jiske zariye maine tujhe apni ne’mat se nawaza Batahqeeq maine apne ta’iin pe ahad kiya hai ki mai apni di hui ne’mat par kisi bande ka shukr qubool nahi karunga jab tak wo mere us bande ka shukr ada na Kare jis ne wo ne’mat us tak pahunchai.

(Wasail us Shia, jild 16)

فلسفہ قربانی قسط و عدل کے زاویہ سے 

ﮐﯿﺎ ﺍﭘﻨﺎ ﺍﺧﻼﺹ ﺛﺎﺑﺖ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮐﺴﯽ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻟﯿﻨﺎ ﺩﺭﺳﺖ ﮨﮯ؟
جواب : 

اگر میرے عزیز آپ کا اشارہ آنے والے دن کی قربانی ہے تو پہلی بات یہ کہ ہر  احکام الہی کے پیچھے ایک مقصد و فلسفہ ہے، صرف جانور کی قربانی نہیں ہے یہ بلکہ اپنے مال کی قربانی ہے جس کے ذریعہ ایک حلال جانور (گائے، بکرا یا بھیڑ، اونٹ) خریدا جاتا ہے اور ذبح کیا جاتا ہے اور جس سے فقط اپنے کو سیر نہیں کیا جانا بلکہ ان فقراء کی شکم پری کی جائے جو ان نعمات و لذات سے تنگ دستی و فقیری کی وجہ سے استفادہ نہیں کر سکتے(حالانکہ ایسا بہت کم ہی رائج ہے کیونکہ اکثر لوگ اپنوں تک ہی تقسیم کرکے اپنی ذمہ داری کو پورا سمجھ لیتے ہیں). 

ایک مخصوص دن یہ احکام جو حاجیوں کے لیے واجب اور غیر حاجی عوام کے لئے مستحبات میں سے رکھا گیا، اس کی وجہ یہ ہو سکتی ہے کہ کوئی فقیر و نادار اس نعمت سے محروم نہ رہے اور ایک وجہ صاحب استطاعت کو یاد دلانا کہ فقط تمہارا خود کا پیٹ بھرنا ہی کافی نہیں بلکہ خدا کی راہ میں دوسرے افراد معاشرہ کا بھی خیال رکھنا ہے، قسط کو عدل کی طرف لے جانا ہے، اور یہ ایک بہترین یاد آوری ہے عظیم قربانی کی اور اس کے پیچھے فلسفہ کی، انسان اس پورا فلسفہ حیات لے سکتا ہے کہ صرف خود کے لیے نہیں جینا بلکہ دوسرے افراد معاشرہ جن تک نعمات الہی نہیں پہنچ رہی ان تک نعمات الہی کو پہنچانا، اور یہی وہ فریضہ ہے جو انسان کے کندھوں پہ ہے عادلانہ تقسیم کرے ان نعمات کی جو اسے اللہ نے عنایت فرمائیں ہیں جس سے کہ ایک بہترین مثالی معاشرہ تشکیل پا سکے جو عدل سے پر ہو جہاں مہروم و تنگدست نہ ہو. 

  اپنے مال و دولت، قیمتی وقت، و دوسرے وسائل سے مجبور و نادار مستضعفین کی ہر طرح کی امداد فقط خوشنودی الہی کے لئے حقیقی قربانی ہے اور یوم عید الاضحٰی اسی جانب ہر سال امت مسلمہ کو غور و فکر کا موقع دیتی ہے. 
خدا، ہمیں حقیقی معنوں میں اپنے عزیز تر چیزوں کو  اپنی راہ میں قربان کرنے کی توفیق عطا فرمائے جس سے کہ معاشرے میں عدل کا نفاذ ہو سکے.. 
آمین
تحریر از قلم عادل عباس 

کائنات پر آئمہ علیہم السلام کا تسلط و اختیار 

کائنات پر آئمہ علیہم السلام کا تسلط و اختیار 

تمام ذرات عالم پر ولایت 

امام کو کچھ معنوی مقامات بھی حاصل ہوتے ہیں جو حکومت کی ذمہ داری کے علاوہ ہیں اور وہ “اللہ کی خلافت کلی” ہے. آئمہ کے فرامین میں گاہے اس کا ذکر ہوا ہے. یہ ایک تکوینی خلافت ہے جس کی رو سے “ولی امر” کے آگے تمام ذرات مطیع و فرمانبردار ہوتے ہیں.

(ولایت فقیہ)

خلیفه الہی کا خزائن الہی پر تسلط و اختیار 

عزائم میں نبی کی مدد آپ کی قطبیت اور خلافت کی بدولت ہے. یہ مدد اللہ کے جود و کرم کا ایک خزانہ ہے. پس یہ خزانے اللہ کے ہیں اور ان میں تصرف اس کا ولی کرتا ہے. اسی لیے فرمایا ہے : “خزائن اللہ کے ہیں اور ان میں تصرف خلیفہ فرماتا ہے” خلیفہ اس ہستی کی ملکیت میں تصرف کرتا ہے جس نے اسے خلیفہ بنایا ہے. البتہ یہ خلافت اس وقت تک حاصل نہیں ہوتی جب تک حق تعالٰی اس بندے میں ہر قسم کا تصرف نہ کر لے. یہ تصرف اس وقت تک جاری رہتا ہے جب تک بندہ افق فنا کی آخری حد کو چھو نہیں لیتا. پھر جب وہ ذات و صفات اور افعال کے لحاظ سے اپنے وجود سے گزر جاتا ہے تو اب کسی قسم کا تصرف، تصرف کنندہ اور تصرف شدہ باقی نہیں رہتا مگر اللہ کی طرف سے، اللہ کے لیے اور اللہ کی راہ میں. پھر جب اللہ اس بندے کو اس کی اپنی قلمرو میں واپس بھیجتا ہے تو اب وہ بندہ اللہ کے خزائن میں تصرف شروع کرتا ہے یوں مجازات الہیہ کا وقوع عمل میں آتا ہے. پس ایک لحاظ سے خزانے اللہ کے ہیں اور تصرف بندے کا، دوسرے لحاظ سے خزائن اور تصرف دونوں اللہ کے ہیں، تیسرے زاویے سے یہ دونوں بندے کے ہیں اور چوتھے زاویے سے تصرف اللہ کا ہے اور خزائن بندے کے ہیں. پس اس امر میں تدبر کر.

(تعیلقات علی شرح فصوص الحکم)

ولی کامل کے آگے تمام عوامل کی اطاعت 

سارے عوالم اس ولی کامل کے سامنے سر تسلیم خم ہیں جس کے پاس اسم اعظم کا کچھ حصہ ہے. ہمارے آئمہ سے منقول ہے کہ جناب آصف بن برخیا کے پاس اسم اعظم کا ایک حرف موجود تھا. پس اس نے اسی کے ذریعے تکلم کیا جس کے نتیجے میں اس کی جگہ اور شہر سبا کے درمیان زمین شگافتہ ہو گئی پس اس نے تخت بلقیس اٹھا کر سلیمان کے آگے رکھ دیا. پھر زمین پلک جھپکنے سے پہلے دوبارہ پھیل گئی اور پہلی حالت میں لوٹ آئی. نیز مروی ہے کہ اسم اعظم تہتر حروف پر مشتمل ہے اور معصومین علیہم السلام ان میں سے بہتّر کو جانتے ہیں. ایک حرف اللہ کے پاس محفوظ ہے جسے اس نے اپنے علم غیب کے ساتھ مخصوص کر لیا ہے. 

(تعلیقات علی شرح فصوص الحکم) 

عالم امکان کے ھیولی کی تسخیر 

عالم امکان کا ہیولی ولی امر کے سامنے مسخر اور مطیع ہے. وہ اسے جس طرح چاہے بدلتا ہے اور اس میں تصرف کرتا ہے. روایت ہے کہ رسول اللہ صل اللہ علیہ و آلہ و سلم نے ایک خط کا ذکر فرمایا جو دوسرے عالم کے بارے میں اللہ کے طرف سے آیا. اس میں اہل جنت سے خطاب ہوا ہے : “زندہ اور نہ مرنے والی ہستی کی طرف سے زندہ اور نہ مرنے والے کے نام. اما بعد : میں جس چیز سے کہتا ہوں : ہو جاؤ! وہ ہو جاتا ہے اور میں تیرے لیے بھی یہ اختیار قرار دیتا ہوں کہ جب تو کہے ہو جاؤ تو وہ جائے”. پس حضرت رسول اکرم ص نے فرمایا : “کوئی اہل بہشت کسی چیز سے ہو جاؤ! نہیں کہتا مگر یہ کہ وہ کام ہو جاتا ہے. ” (علم الیقین، جلد ٢، ص ١٠٦١)

(مصباح الہدایہ)

کائنات کے تمام اجزا اور قوتیں ولی کامل کی فرمانبردار 

رسول اکرم ص نے فرمایا :” فرشتے ہمارے اور ہمارے چاہنے والوں کے خادم ہیں “.(عیون اخبار ارضا، جلد ١، ص ٢٠٤، باب٢٦، ح٢٢) یہ فرمان ہمارے اس بیان کی تائید کرتا ہے کہ اس کائنات کے تمام اجزا جزئیات خواہ وہ علمی ہوں یا عملی، ولی کامل کے قبضے میں ہے. کچھ فرشتے اس کے علمی ماتحت ہیں، مثلاً جبرئیل ع اور اس کے ہم پلہ فرشتے جبکہ کچھ فرشتے اس کے عملی کارندے ہیں مثلاً عزرائیل ع اور اس کے ہم پلہ فرشتے، نیز جس طرح زمین و آسمان کا نظام چلانے والے فرشتے. فرشتے ان ہستیوں کے چاہنے والوں کی خدمت بھی ان معصومین ع کے تصرف کی وجہ سے کرتے ہیں جس طرح انسانی بدن کے بعض اجزا نفس کے حکم و تصرف کے باعث دیگر اجزا کی مدد کرتے ہیں.

(مصباح الہدایہ)

امام عالم میں تصرف کرنے والا اور ارادہ خدا کا مظہر 

چونکہ لیلتہ القدر ولی کامل کی مکمل توجہ کی رات ہے، نیز اس کی ملکوتی سلطنت کے ظہور کی رات ہے اور یہ ظہور ہر عصر کے امام اور ہر زمانے کے قطب جو اس دور میں ہمارے آقا و مولا و امام و ہادی بقیتہ اللہ فی الارضین حضرت حجتہ ابن الحسن العسکری (ارواحنا المقدمہ الفداء) ہیں. پس وہ اس عالم طبیعت کی جس اکائی کو بھی چاہے اس کی حرکت کند کر دیتا ہے اور جسے چاہے اس کی حرکت تیز کر دیتا ہے. وہ جس رزق کو چاہے زیادہ کرتا ہے. یہ ارادہ حق ہے. یہ اللہ کے ارادہ ازلیہ کا پرتو اور قوانین الہیہ کا تابع ہے. اسی طرح اللہ کے فرشتے بھی ذاتی تصرفات کے مالک نہیں. در حقیقت ہر چیز کا تصرف بلکہ تمام ذرات وجود کا تصرف، خدائی تصرف ہے اور اللہ کے ارداہ غیبی کا نتیجہ و تابع ہے.

(آداب الصلاۃ)

اولیاء الہی کے تسلّط کا راز 

یہ جان لینا ضروری ہے کہ تفویض محال ہے اور اس سے مراد یہ ہے کہ(نعوذبااللہ) اللہ کے ہاتھ بندھے ہوئے ہیں اور بندہ اپنی طاقت اور ارادے میں خود مختار ہے اس سلسلے میں بڑے اور چھوٹے امور کا کوئی فرق نہیں. بنابریں جس طرح کسی کو مارنے یا زندہ کرنے یا خلق کرنے یا فنا کرنے یا ایک چیز کو دوسری میں تبدیل کرنے کا اختیار کسی  مخلوق کو تفویض کرنا محال اور باطل ہے اسی طرح کسی تنکے کو حلانے کے معاملے میں بھی تفوض باطل ہے اگر چہ وہ کوئی مقرب فرشتہ یا نبی مرسل ہی کیوں نہ ہو. عقل جبروت اعلٰی سے لیکر ہیولایے اولی اور کائنات کے تمام ذرات اللہ کے ارادہ کاملہ کے آگے مسخر اور سر تسلیم خم ہیں. یہ سب کسی بھی لحاظ سے بھی امر میں خود مختار نہیں ہیں. یہ سب اپنے وجود، وجودی کمالات، حرکات و سکنات، ارادہ و طاقت اور دیگر معاملات میں محتاج و فقیر بلکہ فقر محض ہیں. اسی طرح قیومیت حق، بندوں کے خود مختار نہ ہونے اور اللہ کے ارادوں کے نافذ و مؤثر ہونے کے معاملے میں بھی بڑے اور چھوٹے امور میں کوئی فرق نہیں. بنابریں جس طرح ضعیف چھوٹے کاموں مثلاً حرکت و سکون وغیرہ پر قادر ہیں اسی طرح اللہ کے خاص بندے اور مجرد فرشتے عظیم کاموں مثلاً زندہ کرنے، مارنے، رزق دینے، خلق کرنے اور فنا کرنے پر قادر ہیں. جس طرح حضرت ملک الموت لوگوں کو موت سے ہمکنار کرنے پر مامور ہیں اور ان کا مارنا قبولیت دعا کی طرح نہیں اور نہ ہی تفویض کے مانند ہے جو باطل اور محال ہے. اسی طرح اگر کوئی ولی کامل اور طاہر و طاقتور نفس مثلاً نفوس انبیاء و اولیاء اللہ کی قضا و قدر کے مطابق فنا کرنے، خلق کرنے، موت سے ہمکنار کرنے اور زندہ کرنے پر قادر ہو تو اسے تفویض کہنا درست نہیں جو باطل اور محال ہے.

اگر اللہ اپنے بندوں کے امور کا اختیار ایسی کامل روح کے سپرد کر دے جس کی پسند اللہ کی پسند میں فانی ہو، جس کا ارادہ اللہ کے ارادے کا پرتو ہو اور جو  اللہ کے ارادوں کے منافی کوئی ارادہ نہ کرنے، نیز اللہ کے کامل ترین نظام کے برخلاف کوئی حرکت نہ کرے خواہ اس کا تعلق تخلیق و ایجاد سے ہو یا تشریع و تربیت سے تو اس میں کوئی مضائقہ نہیں بلکہ یہ برحق ہے. در حقیقت یہ تفویض نہیں. 

Khumaini sahab

(چہل حدیث) 

اقتباسات از امامت و انسان کامل 

امام خمینی رح


محتاج دعا عادل عباس

خلافت فقر محض ہے

​خلیفہ فنائے مطلق کا مظہر 

اللہ تعالٰی نے اپنے عظیم ترین خلیفہ کو مقام رسالت سے سرفراز فرمایا. رسالت فنائے مطلق اور مکمل طور پر اپنے وجود سے گزرنے، اپنی الگ اور امتیازی حیثیت کے مکمل خاتمے، سے عبارت ہے کیونکہ حضرت ختمی مرتبت ص کی رسالت مطلقہ اللَّه کی برزخی خلافت کبری ہے. یہ خلافت عبارت ہے ظہور، تجلی، تکوین اور تشریع کے میدانوں میں خلافت سے، اس خلیفہ کی اپنی الگ حیثیت نہیں ہو سکتی وگرنہ خلافت کا وجود خود مختار بن جائے گا جو کسی مخلوق کے لیے ممکن نہیں. 


خلافت فقر محض ہے

خلافت کی حقیقت خالص فقر و احتیاج سے عبارت ہے جس کی طرف رسول ص نے اشارہ کرتے ہوئے فرمایا کے فقر میرے لیے باعث فخر ہے. (الفقر فقری وبہ افتخر) (فقر میرے لیے باعث فخر ہے اور میں اس پر فخر کرتا ہوں) 

کتاب بحار الانوار، ج 69


خلیفہ خود مختار نہیں ہوتا

عزائم میں نبی کی مدد رسانی آپ ص کی قطبیت اور خلافت کی بدولت ہے. یہ مدد اللَّه کے جود و کرم کا خزانہ ہے. پس خزانے اللَّه کے ہیں اور ان میں تصرف اس کا خلیفہ کرتا ہے. اس لیے فرمایا : خزانے اللَّه کے ہیں اور ان میں تصرف خلیفہ فرماتا ہے. خلیفہ اس ہستی کی ملکیت میں جس طرح چاہے تصرف کرتا ہے جس نے اسے خلیفہ بنایا ہے. البتہ یہ خلافت اس وقت تک حاصل نہیں ہوتی جب تک حق تعالی اپنے اس بندے میں ہر قسم کا تصرف نہ کر لے. یہ تصرف اس وقت تک جاری رہتا ہے جب تک یہ بندہ افق فنا کی آخری حد کو چھو نہیں لیتا. پھر جب وہ ذات و صفات اور افعال کے لحاظ سے اپنے وجود سے گزر جاتا ہے تو اب کسی کا تصرف، متصرف(تصرف کرنے والا) اور متصرف فیہ(جس میں تصرف کیا جائے) باقی نہیں رہتا مگر اللَّه کی طرف سے، اللَّه کے لیے اور اللَّه کی راہ میں. پھر جب اللَّه بندے کو اس کی اپنی قلمرو میں واپس لاتا ہے تو اب بندہ اللَّه کے خزائن میں تصرف شروع کرتا ہے. یوں مجازات الہیہ کا وقوع عمل. میں آتا ہے. پس ایک لحاظ سے خزانے اللَّه کے ہیں اور تصرف بندے کا اور دوسرے لحاظ سے خزائن اور تصرف دونوں ہی اللَّه کے ہیں. تیسرے زاویے سے یہ دونوں بندے کے ہیں اور چوتھے زاویے سے تصرف اللَّه کا ہے اور خزائن بندے کے ہیں. 

ماخوذ از انسان کامل 

امام خمینی رح

تحریر الاحقر عادل عباس